’ملا فضل اللہ پاکستان ہی میں موجود ہیں‘

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption طالبان کا خیال ہے کہ میاں نواز شریف مذاکرات کے بارے میں سنجیدہ ہی نہیں تھے

غیر قانونی شدت پسند تنظیم تحریکِ طالبان پاکستان کا کہنا ہے کہ ’نواز حکومت نے مذاکرات کا جو مذاق اڑایا ہے، ہمارے ساتھ ایسا مذاق تو نہ مشرف نے کیا، نہ زرداری نے۔‘

اس کے ساتھ ہی تنظیم کا کہنا ہے کہ ان کے امیر ملا فضل اللہ افغانستان میں نہیں بلکہ پاکستان کے قبائلی علاقے ہی میں موجود ہیں۔

تنظیم کے مرکزی ترجمان شاہد اللہ شاہد نے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے کہا کہ نواز حکومت نے تحریکِ طالبان پاکستان کے ساتھ مذاکرات کا ڈھونگ رچایا اور اس سلسلے میں وہ سنجیدہ نہیں تھے۔ ان کا کہنا تھا کہ اس فریب کا ردِ عمل تنظیم ظاہر کرے گی۔

پاکستانی فوج کا کہنا ہے کہ افغانستان کی حکومت سے تحریکِ طالبان پاکستان کے سربراہ ملا فضل اللہ کے خلاف کارروائی کے لیے کہا جائے گا۔ تاہم شاہد اللہ شاہد نے دعویٰ کیا ہے کہ ملا فضل اللہ پاکستان ہی کے قبائلی علاقے میں موجود ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ جب ملا فضل اللہ افغانستان میں موجود تھے تب بھی وہ افغان حکومت کے زیرِ اثر نہیں تھے اور تنظیم نے آج تک کسی بھی حکومت سے کوئی مدد نہیں لی۔

یاد رہے کہ تحریکِ طالبان پاکستان اور حکومتِ پاکستان نے اس سال کے آغاز میں ملک میں امن کے قیام کے لیے مذاکرات کا سلسلہ شروع کیا تھا جو کہ ناکام ہو گیا۔

اگرچہ تحریکِ طالبان نے مذاکراتی عمل کے دوران جنگ بندی کا اعلان کیا تھا تاہم حکومتی اعداد و شمار کے مطابق فروری 2014 میں مذاکراتی عمل کے آغاز سے لے کر آٹھ جون تک ملک میں دہشت گردی کے 20 بڑے واقعات ہوئے جن میں 195 افراد ہلاک ہوئے۔ ان واقعات میں کراچی کے ہوائی اڈے پر ہونے والا حملہ بھی شامل ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption حکومت اور طالبان کے درمیان مذاکرات کے لیے مختلف کمیٹیاں تشکیل دی گئی تھیں، لیکن یہ سلسلہ آگے نہیں بڑھ سکا

واضح رہے کہ پاکستانی فوج کے شعبۂ تعلقاتِ عامہ کا کہنا ہے کہ شمالی وزیرستان میں ’ضربِ عضب‘ آپریشن میں اب تک 376 شدت پسند ہلاک ہو چکے ہیں، جبکہ 19 شدت پسندوں نے ہتھیار ڈال کر خود کو حکام کے حوالے کر دیا ہے۔

اس کے علاوہ اب تک شدت پسندوں کے 16 ٹھکانے اور بم بنانے والی فیکٹریاں تباہ کر دی گئی ہیں۔ تاہم شاہد اللہ شاہد کا کہنا ہے کہ اس آپریشن میں صرف دس سے 12 مجاہدین ہلاک ہوئے ہیں۔

شاہد اللہ شاہد نے شمالی وزیرستان کے آپریشن کے حوالے سے کہا کہ اس میں ہلاک ہونے والے ’مجاہدین ہمارے بھائی ہیں تاہم وہ تحریکِ طالبان پاکستان کا حصہ نہیں تھے۔‘

شاہد اللہ شاہد نے ایک مرتبہ پھر غیر ملکی کمپنیوں کو پاکستان میں اپنی کارروائیاں بند کرنے کے لیے کہا۔ انھوں نے ان اطلاعات کی بھی مذمت کی کہ چند غیر ملکی ایئر لائینز پشاور تک اپنی پروازیں بحال کر رہی ہیں۔

اسی بارے میں