بھارت نے نو پاکستانی قیدی رہا کر دیے

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption پاکستانی دفتر خارجہ کا کہنا ہے کہ پاکستان کی تحویل میں 296 بھارتی شہری ہیں جن میں ماہی گیروں کی تعداد 249 ہے

پاکستان کے دفترِ خارجہ کا کہنا ہے کہ بھارت نے نو پاکستانی قیدیوں کو رہا کر دیا ہے تاہم تناسب کے اعتبار سے پاکستانی جیلوں میں قید عام بھارتی شہریوں کی تعداد بھارت میں زیرِحراست پاکستانیوں سے بہت کم ہے۔

دفتر خارجہ کی جانب سے جاری کردہ بیان میں بتایا گیا ہے کہ جمعے کو بھارتی حکام نے جن نو پاکستانی شہریوں کو رہا کیا ان میں پانچ ماہی گیر اور چار دیگر شہری شامل ہیں۔

حکام کے مطابق بھارت کے زیرِحراست 477 پاکستانی قیدیوں میں 346 عام شہری اور 131 ماہی گیر ہیں جبکہ ان میں سے 22 قیدی اپنی سزا کی مدت پوری کرنے کے بعد رہائی کے منتظر ہیں۔

پاکستانی دفتر خارجہ کا کہنا ہے کہ پاکستان کی تحویل میں 296 بھارتی شہری ہیں جن میں ماہی گیروں کی تعداد 249 ہے۔

تناسب کے اعتبار سے دیکھا جائے تو پاکستان میں زیرِحراست بھارتی شہریوں میں بڑی تعداد ماہی گیروں کی ہے جن کے بارے میں عام تاثر یہی ہے کہ وہ شکار کے دوران غلطی سے سرحد پار کر جاتے ہیں تاہم بھارت کی جیلوں میں قید پاکستانیوں میں اکثریت عام پاکستانی شہریوں کی ہے۔

خیال رہے کہ بھارتی ہم منصب کی تقریب حلف برداری میں شرکت سے قبل پاکستانی وزیراعظم نے خیر سگالی کے طور پر 151 بھارتی قیدیوں کو رہا کرنے کا حکم دیا تھا جس کے جواب میں بھارت نے پانچ شہریوں سمیت 32 پاکستانی ماہی گیروں کو رہا کیا تھا۔

اسی بارے میں