پنجاب میں بارشوں سے ہلاکتوں کی تعداد 131

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption پی ڈی ایم اے کے ترجمان خالد نواز نے بتایا کہ حکومت نے متاثرین کی امداد کے لیے دس کروڑ روپے کا فنڈ مختص کیا ہے

پاکستان کے صوبہ پنجاب میں قدرتی آفات سے نمٹنے کے صوبائی ادارے کے مطابق صوبے میں حالیہ بارشوں اور سیلابوں میں ہلاک ہونے والوں کی تعداد 131 تک پہنچ گئی ہے۔

لاہور میں بی بی سی کی نامہ نگار شمائلہ جعفری سے بات کرتے ہوئے پنجاب کے قدرتی آفات سے نمٹنے کے صوبائی ادارے پی ڈی ایم اے کے صوبائی ترجمان خالد نے کہا کہ ’پنجاب میں حالیہ بارشوں سے 131 افراد ہلاک اور 273 زخمی ہوئے ہیں۔‘

انھوں نے کہا کہ صوبے کے بہت سے زیرِ آب علاقوں میں پانی کی سطح کم ہو رہی ہے اور خطرہ گھٹ ہو رہا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ حکام کی توجہ اب جھنگ اور چنیوٹ کے درمیانی علاقے پر ہے جہاں شدید سیلاب کا خطرہ ہے۔

ترجمان نے کہا کہ حکام حالات پر نظر رکھے ہوئے ہیں اور ضرورت پڑنے پر دریائے چناب پر واقع تریموں بیراج سے پہلے حفاظتی بند میں شگاف ڈالا جائے گا۔

تاہم انھوں نے کہا کہ حکام نے اس بارے میں تاحال کوئی فیصلہ نہیں کیا۔

اس سے پہلے پاکستان میں قدرتی آفات سے نمٹنے کے قومی ادارے این ڈی ایم اے کے ترجمان نے بتایا تھا کہ صوبہ پنجاب میں سیلابی ریلے سے اہم آبی تنصیبات کو بچانے کے لیے ضرورت پڑنے پر دریائے چناب پر واقع تریموں بیراج سے پہلے حفاظتی بند میں شگاف ڈالنے پر غور کیا جا رہا ہے۔

انھوں نے کہا تھا کہ ممکنہ شگاف کی وجہ سے پہلے ہی ان علاقوں میں ریڈ الرٹ جاری کیا جا چکا ہے۔

پنجاب کے پی ڈی ایم اے کے ترجمان خالد نواز نے بتایا کہ حکومت نے متاثرین کی امداد کے لیے دس کروڑ کا فنڈ مختص کیا ہے جسے متاثرہ علاقوں کی ضلعی انتظامیہ امداد کے لیے استعمال کرے گی۔

ریڈیو پاکستان کے مطابق سیلاب سے متاثرہ علاقوں میں پاکستانی فوج کا امداد اور بحالی کا آپریشن جاری ہے۔

سرکاری ریڈیو نے فوج کے شعبۂ تعلقات عامہ کے ادارے آئی ایس پی آر کے حوالے سے بتایا کہ گوجرانوالہ ڈویژن میں 54 ریلیف کیمپ قائم کیے گئے ہیں جہاں سیلاب زدگان کو خوراک، رہائش اور صحت کی سہولیات مہیا کی جا رہی ہیں۔

سیلاب متاثرین کو صحت کی سہولیات کی فراہمی کے لیے صحت کے 73 موبائل کیمپ بھی قائم کیے گئے ہیں۔

اسی بارے میں