روسی وزیر دفاع کا پہلا دورہ پاکستان

تصویر کے کاپی رائٹ PID
Image caption اگلا قدم پاکستانی بحریہ کے ساتھ دو طرفہ تعاون کی یاداشتوں پر دستخط کرنا ہے، روسی وزیردفاع

روس اور پاکستان نے دفاعی شعبے میں تعاون بڑھانے کے معاہدوں پر دستخط کیے ہیں جبکہ پاکستان نے تجارتی تعاون بڑھانے کی ضرورت پر زور دیا ہے۔

سرگئی شوگو پہلے روسی وزیر دفاع ہیں جنھوں نے پاکستان کا دورہ کیا ہے۔

ریڈیو پاکستان کے مطابق روسی وزیردفاع نے پاکستانی ہم منصب خواجہ آصف اور وزیراعظم سے الگ الگ ملاقاتیں کیں۔

وزرائے دفاع کے مابین دفاعی معاہدوں پر راولپنڈی میں ملاقات کے بعد دستخط ہوئے۔

میڈیا سے گفتگو میں پاکستانی وزیردفاع کا کہنا تھا کہ روسی وزیردفاع کا دورہ پاکستان دونوں ممالک کے درمیان دفاعی تعاون بڑھانے کے علاوہ خطے میں امن اور استحکام کے لیے بھی اکھٹا ہونے میں مدد دے گا۔ ان کا کہنا تھا کہ روسی وزیرخارجہ نے ایک اہم موقع پر پاکستان کا دورہ کیا ہے۔

’روس خطے کا ایک اہم ملک ہے اور ہم مختلف شعبوں میں دو طرفہ تعاون بڑھانا چاہتے ہیں۔‘

اس موقع پر روس کے وزیردفاع سرگئی شوگو نے کہا کہ ہمارا اگلا قدم دونوں ممالک کی بحریہ کے درمیان دو طرفہ تعاون بڑھانے کے لیے یاداشتوں پر دستخط کرنا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ ’روس خطے کے بحرانوں کا پرامن حل چاہتا ہے۔‘

وزیراعظم ہاؤس سے جاری تحریری بیان کے مطابق روسی وزیردفاع نے اسلام آباد میں وزیراعظم نواز شریف سے ملاقات کی جس میں پاکستان نے دو طرفہ تجارت بڑھانے اور سرمایہ کاری کے شعبے کو وسعت دینے کی ضرورت پر زور دیا۔

وزیراعظم نے روسی سرمایہ کار کمپنیوں کو توانائی کے شعبے میں سرمایہ لگانے کی پیش کیش بھی کی۔

شنگھائی تعاون تنظیم کی ممبرشپ کے لیے روس کی حمایت کا شکریہ ادا کیا۔

ان کا کہنا تھا کہ پاکستان منشیات کی سمگلنگ اور شدت پسندی کے چیلینج سے نمٹنے کے لیے دیگر ممالک کے ساتھ مزید تعاون بڑھانے کے لیے بھی تیار ہے۔

یاد رہے کہ چند روز قبل ریڈیو پاکستان کو دیے گئے ایک انٹرویو میں روس کے سفیر الیکشی دیدوف نے بتایا تھا کہ روس پاکستان میں دہشت گردی کے خلاف جاری آپریشن کو مستحکم کرنے کے لیے35 ایم آئی ہیلی کاپٹرز فراہم کرے گا۔

اسی بارے میں