پاکستانی فوج ’بائنڈنگ فورس‘ہے: جان کیری

تصویر کے کاپی رائٹ ISPR
Image caption پاکستانی فوج کے سربراہ جنرل راحیل شریف کا یہ امریکہ کا پہلا سرکاری دورہ تھا جس میں انھوں نے اعلیٰ عسکری اور سیاسی حکام سے ملاقاتیں کیں

امریکی وزیرِ خارجہ جان کیری نے پاکستانی فوج کے سربراہ راحیل شریف سے واشنگٹن میں ملاقات کے دوران پاکستانی فوج کو ’بائنڈنگ فورس‘ یعنی یکجا رکھنے والی قوت قرار دیا ہے۔

پاکستانی فوج کےشعبۂ تلعقاتِ عامہ (آئی ایس پی آر) کے ڈائریکٹر جنرل میجر جنرل عاصم باجوہ نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر بتایا کہ اتوار کی شب ہونے والی ملاقات میں جنرل راحیل نے خطے کے سکیورٹی مسائل پر پاکستانی نقطۂ نظر بیان کیا۔

عاصم باجوہ کے مطابق جنرل راحیل شریف نے جان کیری کو خطے کی صورتِ حال پر پاکستانی موقف سے آگاہ کیا۔

آئی ایس پی آر کے ڈائریکٹر جنرل کے مطابق امریکی وزیرِ خارجہ جان کیری نے پاکستان اور افغانستان کے تعلقات میں بہتری کو سراہتے ہوئے اسے علاقائی سلامتی کے لیے مثبت قدم قرار دیا۔

ان کا کہنا تھا کہ جان کیری نے پاکستان کو دونوں ممالک کے تعلقات میں مزید بہتری لانے کی یقین دہانی کرائی۔

آئی ایس پی آر کے مطابق امریکی وزیرِ خارجہ نے دہشت گردی کے خلاف جنگ میں پاکستان کے کردار اور اس کی قربانیوں کو تسلیم کیا۔

تصویر کے کاپی رائٹ AsimBajwaISPR
Image caption جنرل راحیل شریف نے 19 نومبر کو واشنگٹن میں امریکی سینیٹ کی خارجہ امور کی کمیٹی کے ارکان سے ملاقات کی تھی

دوسری جانب امریکی وزارتِ خارجہ اور امریکہ میں پاکستانی سفارت خانے نے اس ملاقات کی تفصیلات پر تاحال خاموشی اختیار کر رکھی ہے۔

واشنگٹن سے نامہ نگار برجیش اپادھیائے کا کہنا ہے کہ امریکی وزارتِ خارجہ نے اس ملاقات کی تصدیق کی ہے تاہم انھوں نے اس کے علاوہ کوئی معلومات فراہم نہیں کیں۔

امریکی وزارتِ خارجہ کے مطابق ان کا اس بارے میں آج رات تک کوئی بیان جاری کرنے کا ارادہ نہیں ہے۔

نامہ نگار کے مطابق واشنگٹن میں موجود پاکستانی سفارت خانے نے بھی رابطہ کرنے کی کوشش کی گئی تاہم وہاں سے بھی کوئی معلومات فراہم نہیں ہو سکیں۔

واضح رہے کہ پاکستانی فوج کے سربراہ جنرل راحیل شریف کا یہ امریکہ کا پہلا سرکاری دورہ تھا جس میں انھوں نے اعلیٰ عسکری اور سیاسی حکام سے ملاقاتیں کیں۔

جنرل راحیل شریف نے بدھ 19 نومبر کو واشنگٹن میں امریکی سینیٹ کی خارجہ امور کی کمیٹی کے ارکان سے بھی ملاقات کی تھی۔

پاکستانی فوج کے سربراہ نے کمیٹی کو بتایا تھا کہ پاکستانی فوج فاٹا میں اس بات کو یقینی بنائے گی کہ وہاں سے فرار ہونے والے دہشت گرد واپس نہ آ سکیں اور نہ ہی پاکستانی سرزمین پر اپنے آپریشنل اڈے قائم کر سکیں۔

آئی ایس پی آر کا اس حوالے سے کہنا تھا کہ سینیٹ کی امورِ خارجہ کی کمیٹی کے ارکان نے بھی جنرل راحیل سے ملاقات کے بعد شمالی وزیرستان میں جاری آپریشن کے نتائج کو سراہا۔

آئی ایس پی آر کے مطابق امریکی سینیٹ کی خارجہ امور کی کمیٹی نے تسلیم کیا تھا کہ پاکستانی افواج کے کامیاب آپریشن کی وجہ سے شمالی وزیرستان میں شدت پسندوں کا کمانڈ اینڈ کنٹرول انفراسٹرکچر تباہ ہو گیا ہے۔

اسی بارے میں