تیراہ سے آٹھ لاشیں برآمد، شمالی وزیرستان میں بمباری

تصویر کے کاپی رائٹ BBC Urdu
Image caption انتظامیہ کے عہدیدار، تحصیلدار اور دیگر عملہ لاشیں جمرود میں شاہ کس کے مقام پر لیویز سینٹر میں پہنچا رہے ہیں جہاں ان کی شناخت کی جائے گی

پاکستان کے قبائلی علاقے خیبر ایجنسی میں حکام کے مطابق تیراہ کے مقام پر آٹھ افراد کی لاشیں ملی ہیں جنھیں فائرنگ کر کے ہلاک کیا گیا ہے۔

دوسری جانب سرکاری ذرائع ابلاغ کے مطابق پاکستانی فوج نے شمالی وزیرستان میں جاری فوجی آپریشن ضرب عضب میں جیٹ طیاروں کی بمباری میں 15 شدت پسندوں کو ہلاک کرنے کا دعویٰ کیا ہے۔

بدھ کے روز صبح سویرے خیبر ایجنسی اور اورکزئی ایجنسی کے سرحدی علاقے میں سکیورٹی اہلکاروں کو لاشیں ملی ہیں لیکن اب تک ان کی شناخت نہیں ہو سکی۔ مقامی سطح پر شبہ ظاہر کیا جا رہا ہے کہ ہلاک شدگان شدت پسندوں ہو سکتے ہیں۔

پولیٹیکل انتظامیہ کے اہلکار نے بی بی سی کو بتایا کہ لاشیں تیراہ میں اورکزئی ایجنسی کی سرحد کے قریب اکا خیل میں پڑی تھیں جن کی عمریں 28 سال سے 40 سال کے درمیان بتائی گئی ہیں۔

انتظامیہ کے عہدیدار، تحصیلدار اور دیگر عملہ لاشیں جمرود میں شاہ کس کے مقام پر لیویز سینٹر میں پہنچا رہے ہیں جہاں ان کی شناخت کی جائے گی۔

جس علاقےسے لاشیں ملی ہیں وہاں گذشتہ روز شدت پسندوں اور سکیورٹی اہلکاروں کے درمیان شدید جھڑپیں ہوئی تھیں جس میں حکام کے مطابق سات شدت پسند مارے گئے تھے۔

ایسی اطلاعات موصول ہوئی تھیں کہ پیر اور منگل کی درمیانی رات کوئی ایک سو شدت پسندوں نے خیبر ایجنسی اور اورکزئی ایجنسی کے سرحدی علاقے پر اکا خیل، خزینہ اور شیرین درہ کے مقام پر سکیورٹی اہلکاروں کی تین چوکیوں پر حملے کیے تھے۔

ان حملوں کے رد عمل میں سکیورٹی اہلکاروں نے بھر پور جوابی کارروائی کی تھی جس میں کُل ملا کر 22 شدت پسند ہلاک ہو گئے تھے جبکہ چار سکیورٹی اہلکار اس جھڑپ میں زخمی ہوئے تھے۔

خیبر ایجنسی میں کالعدم تنظیم، لشکر اسلام اور دیگر شدت پسند تنظیمیں متحرک ہیں۔ سکیورٹی فورسز نے خیبر ایجنسی میں 17 اکتوبر سے خیبر ون کے نام سے فوجی آپریشن شروع کر رکھا ہے جہاں فورسز کو مزاحمت کا سامنا ہے۔

خیبر ایجنسی میں حالیہ فوجی آپریشن کے دوران بڑی تعداد میں لوگ نقل مکانی کرکے محفوظ مقامات کی جانب منتقل ہوئے ہیں۔

شمالی وزیرستان میں بمباری

سرکاری ذرائع ابلاغ کے مطابق پاکستانی فوج نے شمالی وزیرستان میں جاری فوجی آپریشن ضرب عضب میں جیٹ طیاروں کی بمباری میں 15 شدت پسندوں کو ہلاک کرنے کا دعویٰ کیا ہے۔

پاکستانی فوج کے شعبہ تعلقات عامہ آئی ایس پی آر کی جانب سے جاری کردہ بیان میں کہا گیا ہے کہ شمالی وزیرستان میں شدت پسندوں کے ٹھکانوں کو جیٹ طیاروں نے نشانہ بنایا ہے۔

بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ جیٹ طیاروں کی بمباری میں 15 شدت پسند ہلاک ہوئے ہیں۔

سرکاری نیوز ایجنسی اے پی پی کے مطابق آئی ایس پی آر کی جانب سے جاری بیان میں یہ نہیں بتایا گیا کہ یہ بمباری کس علاقے میں کی گئی ہے۔

یاد رہے کہ شمالی وزیرستان میں فوجی آپریشن ضرب عضب جون سے جاری ہے جہاں اب تک فوجی کے تعلقات عامہ کے محکمے کے مطابق 1200 سے زیادہ شدت پسند ہلاک کیے جا چکے ہیں جبکہ بڑی مقدار میں اسلحہ فیکٹریاں، ٹارچر سیلز اور شدت پسندوں کے دیگر ٹھکانے تباہ کیے گئے ہیں۔

اسی بارے میں