فیصل آباد: پی ٹی آئی، نواز لیگ کے کارکنان میں تصادم، ایک ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption پاکستان تحریک انصاف نے فیصل آباد میں احتجاج کے دوران اپنے کارکن کی ہلاکت پر منگل کو ملک بھر میں یومِ سوگ منانے کا اعلان کیا ہے

پاکستان تحریکِ انصاف کے سربراہ عمران خان کی جانب سے عام انتخابات میں مبینہ دھاندلی کے خلاف احتجاجاً ملک کے مختلف شہر ’بند‘ کرنے کے اعلان کے بعد پیر کو فیصل آباد میں اس سلسلے میں احتجاج جاری ہے۔

اس احتجاج کے دوران حکمران جماعت پاکستان مسلم لیگ (ن) اور تحریکِ انصاف کے کارکنوں کے درمیان تصادم کے واقعات بھی پیش آئے ہیں اور ناولٹی چوک میں فائرنگ سے ایک شخص ہلاک ہوگیا ہے۔

فیصل آباد پولیس کے اہلکار فضل الرحمان نے بی بی سی اردو کو بتایا ہے کہ ناولٹی برج پر پاکستان مسلم لیگ اور پی ٹی آئی کے کارکنان کے درمیان جھڑپ کے دوران فائرنگ کے نتیجے میں ایک شخص ہلاک اور ایک زخمی ہوا ہے۔

عمران کا ’پلان سی‘: 16 دسمبر کو پاکستان بند کرنے کا اعلان

’شہر بند کرنے سے مراد شٹر ڈاؤن نہیں تھا‘

بی بی سی اردو کی نامہ نگار صبا اعتزاز کے مطابق فیصل آباد کے ڈی سی او سے اس بات کی تصدیق کی ہے کہ مرنے والا 24 سالہ اصغر علی پاکستان تحریک انصاف کا کارکن تھا۔

تحریکِ انصاف کے کارکن کی ہلاکت کے بعد شہر میں حالات مزید کشیدہ ہوگئے ہیں اور تحریکِ انصاف کے کارکن اپنے ساتھی کی لاش لے کر مسلم لیگ(ن) کے سینیئر رہنما اور سابق صوبائی وزیرِ قانون رانا ثنا اللہ کے ڈیرے اور رہائش گاہ کے باہر پہنچے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption انتظامیہ نے کسی بھی ناخوشگوار صورتحال سے نمٹنے کے لیے شہر کے مختلف مقامات پر پولیس کی بھاری نفری تعینات کردی ہے

دوسری جانب حکومتِ پنجاب کے ترجمان زعیم حسین قادری نے کہا ہے کہ پی ٹی آئی کے کارکن کی ہلاکت میں مسلم لیگ نواز کا کوئی ہاتھ نہیں ہے۔ انھوں نے کہا کہ تحقیقات میں یہ بات صاف ہو جائے گی۔

انتظامیہ نے کسی بھی ناخوشگوار صورتحال سے نمٹنے کے لیے شہر کے مختلف مقامات پر پولیس کی بھاری نفری تعینات کردی ہے۔

پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان نے فیصل آباد میں اپنے کارکن کی ہلاکت کی مذمت کرتے ہوئے اعلان کیا ہے کہ وہ فیصل آباد پہنچ کر کارکن کے قتل کی ایف آئی آر درج کرائیں گے۔

انھوں نے کہا کہ فیصل آباد میں جو کچھ ہوا وہ پہے سے طے شدہ منصوبے کے تحت ہوا اور اس کے ذمہ دار رانا ثنا اللہ ہیں جنھیں’نہ قانون کا پتا ہے اور نہ جمہوریت کا۔‘

ان کا کہنا تھا کہ پرامن احتجاج عوام کا حق اور انھیں تحفظ دینا ریاست کی ذمہ داری ہے۔ ’حکومت نے طاقت دکھائی۔ پرامن احتجاج پر گولیاں چلانا کہاں کی جمہوریت ہے؟‘

ان کا کہنا تھا کہ ’ہمارا جرم یہ ہے کہ ہم انصاف مانگ رہے ہیں۔‘

ٹوئٹر پر پی ٹی آئی کے آفیشل اکاؤنٹ سے کی گئی ٹویٹ کے مطابق پاکستان تحریک انصاف نے فیصل آباد میں احتجاج کے دوران اپنے کارکن کی ہلاکت پر منگل کو ملک بھر میں یومِ سوگ منانے کا اعلان کیا ہے۔

Image caption گھنٹہ گھر پر بھی حالات کشیدہ ہو رہے ہیں جہاں 200 سے 300 مسلم لیگ کے کارکنان جمع ہو گئے ہیں: پولیس

ریڈیو پاکستان کے مطابق وزیراعلیٰ پنجاب شہباز شریف نے فیصل آباد میں ناولٹی پل پر ہونے والی فائرنگ کا نوٹس لیا ہے۔

وزیراعلیٰ نے ریجنل پولیس افسر فیصل آباد سے واقعے کی رپورٹ طلب کی ہے اور ہدایت کی ہے کہ فائرنگ کے واقعے میں ملوث افراد کے خلاف فوری کارروائی کی جائے۔

ایک بیان میں وزیراعلیٰ پنجاب نے یہ بھی کہا ہے کہ کسی کو صوبے میں امن وامان خراب کرنے کی اجازت نہیں دی جائے گی اور تاجروں سے زبردستی دکانیں بند کرانے والوں کے خلاف قانونی کارروائی کی جائے گی۔

اس سے قبل پیر کی صبح فیصل آباد میں پاکستان تحریک انصاف کے کارکنان نے شہر کے داخلی راستوں پر الائیڈ چوک، ناولٹی چوک اور ملت روڈ کو بند کرنے کی کوشش کی۔

الائیڈ چوک پر سڑکوں پر ٹائروں کو آگ لگائی گئی اور پی ٹی آئی کی چند خواتین موٹر سائیکل سواروں کو روکنے کی کوشش کرتی نظر آئیں۔

اس کے علاوہ شہر کے مرکز میں واقع گھنٹہ گھر چوک پر بھی حالات کشیدہ ہیں جہاں دونوں جماعتوں کے کارکن سینکڑوں کی تعداد میں جمع ہوئے ہیں۔

فیصل آباد میں واقع گھنٹہ گھر کے آس پاس پاکستان تحریک انصاف اور مسلم لیگ نواز دونوں نے اپنے اپنے موقف کے حق میں پوسٹرز اور بینرز آویزاں کیے ہیں۔

نامہ نگار کے مطابق فیصل آباد میں تین مختلف مقامات پر پی ٹی آئی اور مسلم لیگ نواز کے کارکنان میں تصادم ہوا ہے جبکہ پولیس دونوں جماعتوں کے کارکنان کو دور رکھنے کی کوشش کر رہی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption فیصل آباد میں کاروبار کھلے ہوئے ہیں

ناولٹی چوک پر کارکنان کو منتشر کرنے کے لیے پولیس نے واٹر کینن کا استعمال بھی کیا جبکہ ایک پولیس اہلکار نے بتایا ہے کہ ان کو صرف نظر رکھنے کے احکامات دیے گئے ہیں۔

بی بی سی کی نامہ نگار کے مطابق فیصل آباد میں عموماً کاروبار کھلے ہوئے ہیں۔ ایک دکاندار نے بی بی سی اردو سے بات کرتے ہوئے کہا ’مجھے اس احتجاج اور سیاسی جماعتوں سے کیا غرض میں نے تو اپنے خاندان والوں کے لیے کھانا لے کر جانا ہوتا ہے۔‘

ملت روڈ پر پی ٹی آئی اور مسلم لیگ نواز کے کارکنان آمنے سامنے آ گئے اور ایک دوسرے کے خلاف نعرے بازی کر رہے ہیں۔ تاہم پولیس صورتحال پر قابو پانے کی کوشش کر رہی ہے۔

عام انتخابات 2013 میں مبینہ دھاندلی کے خلاف احتجاج کرنے والے عمران خان نے چند روز قبل اسلام آباد میں ریڈ زون میں واقع ڈی چوک پر جاری دھرنے میں ’پلان سی‘ کا اعلان کیا تھا۔

اس پلان کے تحت ملک کے مختلف شہروں کو بند کرایا جائے گا۔ اس پلان کا آغاز فیصل آباد سے کیا گیا ہے۔

اسی بارے میں