خیبر ایجنسی میں تازہ بمباری میں ’سات شدت پسند ہلاک‘

تصویر کے کاپی رائٹ PAF
Image caption اس فضائی کارروائی میں شدت پسندوں کے آٹھ ٹھکانوں کو نشانہ بنایا گیا: آئی ایس پی آر

پاکستان کے عسکری حکام کے مطابق ملک کے قبائلی علاقے خیبر ایجنسی میں شدت پسندوں کے ٹھکانوں پر ہونے والے تازہ فضائی حملوں میں سات شدت پسند ہلاک ہو گئے ہیں۔

پاکستان فوج کے شعبہ تعلقات عامہ کے ادارے آئی ایس پی آر کی طرف سے جمعرات کو جاری ایک مختصر بیان میں کہا گیا ہے کہ یہ بمباری بدھ کو کی گئی۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ اس فضائی کارروائی میں شدت پسندوں کے آٹھ ٹھکانوں کو نشانہ بنایا گیا۔ یہ پاکستانی جیٹ طیاروں کی خیبر ایجنسی میں مسلسل دوسرے دن بمباری تھی۔

اس سے پہلے پاکستان کے عسکری حکام نے منگل کی شام کو خیبر کے دور افتادہ علاقے تیراہ میں جیٹ طیاروں کی بمباری میں 11 شدت پسندوں کے ہلاک ہونے کا دعویٰ کیا تھا۔

خیبر ایجنسی ایک شورش زدہ علاقہ ہے جہاں 17 اکتوبر سے فوجی آپریشن خیبر ون شروع کیا گیا ہے۔ اطلاعات کے مطابق خیبر ایجنسی میں سکیورٹی فورسز کو سخت مزاحمت کا سامنا ہے اور اس علاقے میں سکیورٹی فورسز اور شدت پسندوں کے درمیان جھڑپیں ہوتی رہی ہیں۔

دسمبر کے اوائل میں وادی تیراہ کے دور افتادہ علاقے اکا خیل میں شدت پسندوں نے سکیورٹی فورسز کی چوکی پر حملہ کیا تھا جس پر سکیورٹی فورسز کی جوابی کارروائی میں چار شدت پسند ہلاک اور چھ زخمی ہوئے تھے۔

نومبر کے وسط میں بھی خیبر ایجنسی میں بمباری کی گئی تھی۔ حکام کے مطابق شدت پسندوں کے ٹھکانوں پر ہونے والے ان فضائی حملوں میں اہم کمانڈروں سمیت کم سے کم 19 شدت پسند ہلاک ہوئے تھے۔

اسی بارے میں