ڈیرہ اسمٰعیل خان: ہیڈکانسٹیبل سمیت چار افراد ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption پولیس کا کہنا تھا کہ قیصر جہاں انتہائی قابل پولیس اہلکار تھے اور انھوں نے ٹارگٹ کلنگ کے کئی واقعات کی کامیاب چھان بین کی تھی جس وجہ سے انھیں دھمکیاں موصول ہو رہی تھیں

خیبر پختونخوا کے جنوبی ضلع ڈیرہ اسماعیل خان میں نامعلوم افراد نے فائرنگ کر کے پولیس کے ہیڈ کانسٹیبل کو دو بھائیوں اور ایک ساتھی سمیت ہلاک کر دیا ہے ۔

پولیس کے مطابق یہ واقعہ بعد مغرب ڈیرہ اسماعیل خان کے محلہ حیات اللہ میں پیش آیا۔ پولیس کے مطابق نامعلوم افراد نے اے ایس آئی قیصر جہاں کے گھر پر دستک دی اور ان پر گیٹ کے قریب فائرنگ کی۔

اس موقعے پر قیصر جہاں کے دو بھائی عنصر جہاں اور خرم جہاں کے علاوہ ان کے گھر پر کام کرنے والا مستری الطاف عرف کاکا موجود تھے۔ حملہ آوروں نے ان تینوں کو بھی فائرنگ کر کے ہلاک کر دیا۔

اطلاعات کے مطابق قیصر جہاں کو کچھ عرصے سے دھمکیاں موصول ہو رہی تھیں۔ پولیس کے مطابق کچھ عرصہ پہلے تک قیصر جہاں کو سولڈر پروموشن دے کر اے ایس آئی تعینات کیا گیا تھا لیکن ان دنوں وہ پھر سے ہیڈ کانسٹیبل کے عہدے پر واپس آ گئے تھے۔

قیصر جہاں کچھ عرصے کے لیے پولیس لائن میں تعینات رہے ۔ ان کے بارے میں پولیس کا کہنا تھا کہ قیصر جہاں انتہائی قابل پولیس اہلکار تھے اور انھوں نے ٹارگٹ کلنگ کے کئی واقعات کی کامیاب چھان بین کی تھی جس وجہ سے انھیں دھمکیاں موصول ہو رہی تھیں۔

جس وقت یہ واقعہ پیش آیا اس وقت ان کے مکان میں مرمت کا کام ہو رہا تھا۔

پولیس اہلکاروں نے بتایا کہ دو حملہ آور موٹر سائیکل پر آئے اور مکان کی دہلیز ہی سے فائرنگ شروع کر دی۔ موقعے سے نائن ایم ایم کی گولیاں ملی ہیں۔

ایسی اطلاعات بھی ہیں کہ حملے کے وقت دستی بم بھی پھینکا گیا تھا لیکن پولیس نے اس کی تصدیق نہیں کی۔

اس حملے کے بعد علاقے میں سخت خوف و ہراس پایا جاتا ہے۔

اسی بارے میں