دولتِ اسلامیہ نے افغانستان پاکستان خطے کا کمانڈر مقرر کر دیا

تصویر کے کاپی رائٹ AFP Getty

دولتِ اسلامیہ نے تصدیق کی ہے کہ اس نے طالبان کے ایک سابق ترجمان حافظ سعید خان کو اس خطے میں اپنا کمانڈر مقرر کر دیا ہے۔ حافظ سعید اس سے قبل طالبان سے منحرف ہو گئے تھے۔

حافظ سعید خان دس روز قبل ایک ویڈیو میں ظاہر ہوئے تھے۔ اب دولتِ اسلامیہ سے منسلک ایک ٹوئٹر اکاؤنٹ سے نشر کیے جانے والے ایک آڈیو بیان میں کہا گیا ہے کہ وہ دولتِ اسلامیہ کے نئے کمانڈر مقرر کر دیے گئے ہیں۔

دولتِ اسلامیہ افغانستان میں بھرتیاں کر رہی ہے

سعید خان کا تعلق اورکزئی ایجنسی سے ہے اور وہ تحریکِ طالبان پاکستان اورکزئی ایجنسی کے سربراہ رہ چکے ہیں۔ سنہ 2013 میں حکیم اللہ محسود کی امریکی ڈرون حملے میں ہلاکت کے بعد وہ تحریکِ طالبان سے الگ ہو گئے تھے۔

سعید خان کے ساتھ ویڈیو میں دوافغان طالبان کمانڈر بھی نظر آ رہے تھے، جس سے ظاہر ہوتا ہے کہ وہ پاکستان اور افغانستان دونوں میں شدت پسندوں کی حمایت حاصل کر رہے ہیں۔

اس ویڈیو پیغام میں دولتِ اسلامیہ کی روایت کے مطابق موت کی دھمکیاں شامل تھیں۔ اس میں سعید خان کو دس افراد کے ایک گروہ کے ساتھ دکھایا گیا ہے جنھوں نے ان کے ہاتھ پر بیعت کر رکھی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption دولتِ اسلامیہ نے دیکھتے ہی دیکھتے بےپناہ طاقت حاصل کر لی ہے اور دنیا کے کئی حصوں میں ان کے حمایتی پیدا ہوئے ہیں

اب دولتِ اسلامیہ کی طرف سے ابو محمد العدنی نے اس بات کی تصدیق کر دی ہے کہ انھیں واقعی دولتِ اسلامیہ نے افغانستان اور پاکستان کے لیے اپنا کمانڈر مقرر کیا ہے۔

العدنی نے اس ویڈیو پیغام میں سعودی شاہ عبداللہ کی موت کا ذکر کیا ہے تاکہ یہ ثابت ہو سکے کہ یہ پیغام نیا ہے۔

دولتِ اسلامیہ کیا ہے؟

انھوں نے کہا کہ سعید خان کو خراسان کا کمانڈر بنایا گیا ہے۔ خراسان افغانستان کا قدیم نام ہے، اور بعض مسلمانوں کے لیے اس میں تاریخی کشش موجود ہے۔

خود افغانستان میں ابھی تک صرف شمالی صوبے ہلمند میں دولتِ اسلامیہ کے سیاہ پرچم نظر آئے ہیں۔ وہاں طالبان سے منحرف ایک کمانڈر ملا عبدالرؤف نے کہا تھا کہ انھوں نے دولتِ اسلامیہ میں شمولیت اختیار کر لی ہے۔ تاہم یہ معلوم نہیں ہو سکا کہ آیا ان کا واقعی دولتِ اسلامیہ سے کوئی رابطہ ہے یا نہیں۔

یاد رہے کہ گذشتہ برس میڈیا کی رپورٹوں میں آیا تھا کہ بنوں، کراچی، ملتان اور بلوچستان کے بعض علاقوں میں دولتِ اسلامیہ کی حمایت میں وال چاکنگ کی گئی ہے، اور پشاور میں اس حوالے سے پیمفلٹ تقسیم کیے گئے ہیں۔

بعض اطلاعات کے مطابق لاہور کے بعض علاقوں میں بھی پوسٹر اور سٹکر دیکھے گئے تھے، تاہم پاکستان کے وزیرِ داخلہ چوہدری نثار علی خان نے کہا تھا کہ دولتِ اسلامیہ نامی تنظیم کا پاکستان میں کوئی وجود نہیں ہے، اس لیے اس معاملے کو ہوا دینا نامناسب ہے۔

اسی بارے میں