مانسہرہ میں بم دھماکہ، ایس ایچ او سمیت دو اہلکار ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption مانسہرہ میں امن و امان کی صورتحال صوبے کے دیگر اضلاع کے مقابلے میں بہتر ہے

پاکستان کے صوبہ خیبر پختونخوا کے ضلع مانسہرہ میں ایک بم دھماکے میں دو پولیس اہلکار ہلاک ہوگئے ہیں۔

مقامی پولیس حکام کا کہنا ہے کہ ہلاک شدگان میں ایک ایس ایچ او اور ایک سپاہی شامل ہیں۔

مانسہرہ پولیس کے کنٹرول روم کے اہلکار نوید نے صحافی انور شاہ کو بتایا کہ یہ دھماکہ پیر کی شب 12 بجے کے قریب لاری اڈہ کے نزدیک ہوا۔

ان کا کہنا تھا کہ پولیس کی ایک موبائل راولپنڈی سے گلگت جانے والی گاڑیوں کے قافلے کو لے کر جب روانہ ہوئی تو سڑک کے کنارے نصب بم پھٹ گیا۔

دوسری جانب کالعدم تحریک طالبان نے میڈیا کو جاری کیے جانے والے ایک تحریری بیان میں اس حملے کی ذمہ داری قبول کر لی ہے۔

خیال رہے کہ گلگت جانے والی مسافر گاڑیوں پر حملوں کے بعد سے انھیں پولیس کی حفاظت میں قافلہ بنا کر روانہ کیا جانے لگا ہے۔

پولیس اہلکار کے مطابق اس دھماکے میں تھانہ سٹی کے ایڈیشنل ایس ایچ او فرید خان اور ایک پولیس اہلکار اجمل ہلاک ہوگئے۔

اس واقعے میں دو اہلکار زخمی بھی ہوئے جنھیں ایوب میڈیکل کمپلیکس ایبٹ آباد منتقل کیا گیا ہے۔

دھماکے سے پولیس موبائل کو شدید نقصان پہنچا۔

اس واقعے کی اطلاع ملتے ہی امدادی کارکن اور قانون نافذ کرنے والے اداروں کے اہلکار جائے وقوع پر پہنچ گئے اور زخمیوں اور لاشوں کو ہسپتال منتقل کیا۔

پولیس کے مطابق دھماکے کے حوالے سے تحقیقات جاری ہیں، تاہم آخری اطلاعات تک کسی قسم کی گرفتاری عمل میں نہیں آئی ہے۔

مانسہرہ میں امن و امان کی صورت حال صوبے کے دیگر اضلاع کے مقابلے میں بہتر ہے تاہم یہاں ماضی میں بھی دھماکوں کے اکادکا واقعات پیش آتے رہے ہیں۔

گذشتہ برس جون میں یہاں راولپنڈی سے گلگت جانے والی فوجی قافلے کو شاہراہ قراقرم پر نشانہ بنایا گیا تھا۔

اسی بارے میں