سابق گورنر چودھری سرور پاکستان تحریک انصاف میں شامل

Image caption ’اگر دولت، طاقت اور عہدے سے آپ عوام الناس کو فائدہ نہیں پہنچا سکتے ان کو انصاف فراہم نہیں کر سکتے تو یہ عہدے بے معنی ہیں۔ اسی لیے میں نے اپنے عہدے سے استعفیٰ دے دیا‘

پاکستان کے صوبہ پنجاب کے سابق گورنر چودھری سرور پاکستان تحریک انصاف میں شامل ہوگئے ہیں اور انھوں نے تسلیم کیا ہے کہ وہ بحیثیت گورنر اپنے فرائض سرانجام نہیں دے سکے۔

وفاقی دارالحکومت اسلام آباد کے ایک مقامی ہوٹل میں منگل کی سہ پہر پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے چوہدری سرور نے باضابطہ طور پر پی ٹی آئی میں شمولیت کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ ان کی عمران خان سے دو مرتبہ ملاقات ہوئی اور دونوں رہنماؤں میں تمام ایشوز پر اتفاق رائے پایا جاتا ہے۔

’تمام ایشوز پر ہمارا تقریباً اتفاق رائے ہے، چاہے وہ نچلی سطح تک اقتدار کی منتقلی کا ہے، چاہے وہ گڈ گورنس کا ہے، چاہے وہ ملک سے کرپشن کے خاتمے کا ہے یا چاہے وہ بزنس کمیونٹی کے لیے بہتر مواقع کا ہے۔‘

چوہدری سرور نے بتایا کہ پی ٹی آئی کے سربراہ عمران خان نے بیرون ملک مقیم پاکستانی کمیونٹی کے معاملے پر بھی ان سے بات کی ہے۔

انھوں نے ایک بار پھر تسلیم کیا کہ وہ بحیثیت گورنر اپنے فرائض سرانجام نہیں دے سکے۔

’اگر دولت، طاقت اور عہدے سے آپ عوام الناس کو فائدہ نہیں پہنچا سکتے ان کو انصاف فراہم نہیں کر سکتے تو یہ عہدے بے معنی ہیں۔ اسی لیے میں نے اپنے عہدے سے استعفیٰ دے دیا۔‘

پریس کانفرنس سے خطاب میں چوہدری سرور نے بتایا کہ گورنر کے عہدے سے مستعفی ہونے کے بعد انھیں بیرون ملک میں ملنے والے پاکستانیوں نے انھیں تحریک انصاف میں شامل ہونے کا مشورہ دیا۔

اس موقعے پر پاکستان تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان نے چوہدری سرور کو اپنی جماعت میں خوش آمدید کرتے ہوئے کہا کہ وہ پارٹی کے سیکریٹری جنرل کے ساتھ مل کر پارٹی کی تنظیم سازی کریں۔

ان کا کہنا تھا کہ سابق گورنر نے برطانیہ کی لیبر پارٹی میں اپنا نام بنایا اور ان کا شمار ان پاکستانیوں میں ہوتا ہے جنھوں نے محنت کر کے مقام حاصل کیا۔

پریس کانفرنس سے خطاب میں عمران خان نے ایک بار پھر ایم کیو ایم کے سربراہ الطاف حسین کے خلاف سخت زبان استعمال کی۔ انھوں نے کراچی کے لوگوں کو دعوت دی کہ وہ اکٹھے ہو کر کراچی کو ایک بار پھر روشنیوں کا شہر بنائیں۔

عمران خان نے وزیراعظم سے بھی مطالبہ کیا کہ جب تک ایم کیو ایم الطاف حسین سے الگ نہیں ہوتی ایسے کسی فورم پر نہ جائیں جہاں ایم کیو ایم موجود ہو۔

یاد رہے کہ چوہدری سرور نے 29 جنوری کو گورنر پنجاب کے عہدے سے استعفیٰ دے دیا تھا۔ انھیں جولائی 2013 میں اس وقت کے صدر آصف علی زرداری نےگورنر پنجاب تعینات کیا تھا۔

چوہدری محمد سرور مسلم فرینڈ آف لیبر کے بانی چیئرمین بھی رہ چکے ہیں۔ برطانیہ میں اپنے قیام کے دوران چوہدری سرور پاکستان اور برطانیہ کے درمیان پل کا کردار ادا کرتے رہے۔

وہ 34 برس پہلے ٹوبہ ٹیک سنگھ سے برطانیہ منتقل ہونے والے چوہدری سرور کو برطانوی دارالعوام کی تاریخ میں پہلے مسلمان رکن ہونے کا اعزاز بھی حاصل ہے۔ تاہم اب وہ اپنی برطانوی شہریت ترک کر چکے ہیں۔

عمران خان نے کہا کہ ہماری جنگ سب دہشت گردوں کے ساتھ ہے اور سب مسلح گروہوں کو غیر مسلح کیا جائے۔ عمران حان نے یہ مطالبہ بھی کیا کہ کراچی میں پولیس کو ویسے ہی غیر جانبدار کیا جائے جیسے خیبرپختونخوا کی پولیس کو غیر جانبدار کیا گیا ہے۔

پاکستان تحریک انصاف کے سربراہ نے وزیراعظم میاں نواز شریف سے مطالبہ کیا کہ وہ جے آئی ٹی کی سانحہ بلدیہ ٹاؤن پر رپورٹ پر ایکشن لیتے ہوئے الطاف حسین کے خلاف برطانیہ میں مقدمہ دائر کریں۔

’اگر آپ مخلص ہیں آپ مصلحتوں میں نہیں پڑے ہوئے، اور سیاسی مصلحت نہیں کر رہے تو الطاف حسین کے خلاف فوری طور پر برطانیہ میں کیس شروع کریں۔ آپ کے پاس پورا مینڈیٹ ہے۔‘

اسی بارے میں