’لوہے سے زیادہ تانبے کے ذخائر پر توجہ دی جائے‘

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption چنیوٹ میں معدنی ذخائر کی دریافت سے متعلق ابتدائی جائرہ رپورٹ میں چین اور جرمنی کے ماہرین کی مدد شامل ہے

پاکستانی حکومت کو ملکی اور غیر ملکی ماہرین نے تجویز دی ہے کہ چنیوٹ میں دریافت شدہ لوہے کے مقابلے میں تانبے کے ذخائر کی کھدائی میں زیادہ توجہ مرکوز کی جائے۔

سرکاری خبر رساں ادارے اے پی پی کے مطابق وزیراعظم نواز شریف کو صوبہ پنجاب کے ضلع چنیوٹ کے جنوب میں تین کلومیٹر کے فاصلے پر واقع رجوعہ نامی علاقے میں لوہے کے ذخائر کے بارے میں تفصیلی بریفنگ دی گئی۔

یاد رہے کہ حال ہی میں ضلع چنیوٹ میں تانبے، لوہے اور سونے کے ذخائر دریافت ہوئے تھے۔

ڈاکٹر ثمر مبارک مند، چیئرمین پنجاب معدنیات کمپنی، چین کی دھاتوں کی صفائی کی کمپنی اور جرمن ماہرین نے وزیراعظم کو بتایا کہ تانبے کے بڑے ذخائر کی موجودگی کے امکانات تھے۔

ماہرین کی جانب سے حکومت کو تجویز دی گئی ہے کہ وہ علاقے سے لوہے کے بجائے تانبے کے ذخائر کو نکالنے پر زیادہ توجہ مرکوز کرے کیونکہ بین الاقوامی منڈی میں لوہے کی 100 ڈالر فی ٹن قیمت کے مقابلے میں تانبے کی فی ٹن قیمت 5000 ڈالر ہے۔

وزیراعظم کو بتایا گیا کہ چینی کمپنی ایم سی سی کے اشتراک سے اس منصوبے پر عمل درآمد کے امکانات کا جائزہ 18 ماہ کی مطلوبہ مدت کے بجائے نو ماہ میں مکمل کر لیا گیا۔

ماہرین کے مطابق اس وقت 28 مربع کلومیٹر کے علاقے میں ابتدائی مطالعہ کیا جا رہا ہے اور ابتدائی نتائج میں یہ پتہ چلا ہے چنیوٹ شہر کے جنوبی اور جنوب مشرقی حصوں میں 200 مربع کلومیٹر کے علاقے میں اچھی قسم کے معدنی ذخائر موجود ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ reuters
Image caption چنیوٹ میں لوہے ااور تانبے کے علاوہ سونے کے ذخائر بھی موجود ہیں، ماہرین

وزیراعظم، وزیراعلیٰ اور دیگر حکام کو بریفنگ دی گئی اور بتایا گیا کہ اسی علاقے میں سونے اور تانبے کے ذخائر ملنے کے امکانات ہیں۔

ماہرین کے مطابق چنیوٹ میں دریافت ہونے والے لوہے کے معدنی ذخائر معیار میں برازیل، روس اور انڈیا کے ذخائر کے برابر ہیں، ان کی مقدار ہزاروں ٹن کے برابر ہے اور انھیں کینیڈا اور سوئٹزرلینڈ کی لیبارٹریوں میں ٹیسٹ کیا جا چکا ہے۔

اس موقعے پر وزیراعظم نواز شریف نے قوم کو مبارک باد بھی دی اور ملکی اور مدد فراہم کرنے والی بین الاقوامی کمپنیوں کے ماہرین کی کوششوں کو سراہا۔

Image caption توقع کی جا رہی ہے کہ معدنیات کے حصول کے کام کے آغاز پر روزگار کے مواقع بڑھیں گے

وزیراعظم نے سرمایہ کاروں کو چنیوٹ میں سٹیل انڈسٹری قائم کرنے کی دعوت بھی دی اور اس توقع کا اظہار کیا کہ اس کی مدد سے ایک لاکھ افراد کو روزگار مل سکے گا۔

میاں نواز شریف نے ملک میں توانائی کے بحران کے خاتمے کے لیے بغیر کسی تاخیر کے دس ہزار میگا واٹ بجلی کے منصوبے کے آغاز کا بتایا اور کہا کہ حکومت کے پاس فنڈز موجود ہیں۔

اسی بارے میں