سینیٹ الیکشن: وزیراعظم کی پارلیمانی رہنماؤں سے مشاورت آج

تصویر کے کاپی رائٹ PID
Image caption سینٹ انتخابات پانچ مارچ کو ہوں گے

پاکستان کے وزیراعظم میاں نواز شریف سینیٹ انتخابات کے حوالے سے مشاورت کرنے کے لیے آج پارلیمانی رہنماؤں سے ملاقات کریں گے۔

جمعرات کو اسلام آباد میں وزیرِخزانہ اسحاق ڈار نے میڈیا کے نمائندوں سے گفتگو میں تصدیق کی کہ ہارس ٹریڈنگ ختم کرنے کے لیے آئینی ترمیم کا طریقہ استعمال ہوسکتا ہے۔

’ہتھیار کون سا استعمال ہوگا، محدود مدت کے لیے یا دیرینہ مدت کے لیے، قانون یا آئین۔ ہتھیار استعمال ہوگا اسے (ہارس ٹریڈنگ) کو ختم کرنے کے لیے۔‘

اس موقع پر ان کے ہمراہ موجود وفاقی وزیرِریلوے سعد رفیق نے بتایا کہ جمعیت علمائے اسلام (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمن نے آئینی ترمیم کی تجویز سے انکار نہیں کیا تاہم انھوں نے مشاورت کے لیے مہلت مانگی ہے۔

قومی اسمبلی میں قائد حزبِ اختلاف اور پیپلز پارٹی کے رہنما خورشید شاہ کا کہنا تھا کہ ’میں نے یہ کہا ہے کہ کتنے افسوس کی بات ہے کہ ہم ہارس ٹریڈنگ کوآئینی ترمیم سے روکنے جائیں۔ ہم سب سیاسی جماعتوں کے لیے ایک بدنما داغ ہے اس لعنت کو روکنے کے لیے کیا اقدامات کیے جائیں اس کے لیے یہ طے ہے کہ جتنی جلد ہوسکے حکومت آل پارٹیز کانفرنس بلوائے۔‘

یاد رہے کہ پاکستان کے ایوانِ بالا کی 52 نشستوں کے لیے پانچ مارچ کو انتخابات منعقد ہوں گے۔

کاغدات نامزدگی واپس لینے کی آخری تاریخ 28 فروری ہے جبکہ اسی روز امیدواروں کی حتمی فہرست شائع کردی جائے گی۔

آئینِ پاکستان کے تحت صوبوں، اسلام آباد اور فاٹا سے تعلق رکھنے والے سینیٹ کے نصف ارکان ہر تین سال بعد ریٹائر ہوتے ہیں۔

ایوانِ بالا میں اس وقت سب سے زیادہ نشستیں پاکستان پیپلز پارٹی کے پاس ہیں جس کے اراکین کی تعداد 40 ہے اور اس میں سے 21 اراکین 11 مارچ کو ریٹائر ہو جائیں گے۔

حکمران جماعت مسلم لیگ ن کے اراکینِ سینیٹ کی تعداد 16 ہے جن میں سے آٹھ کی نشستیں خالی ہو رہی ہیں۔

اسی بارے میں