ڈیرہ اسماعیل خان میں ڈی ایس پی قتل

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption ڈیرہ اسماعیل خان میں اس سے پہلے بھی پولیس اہلکاروں پر نامعلوم افراد حملہ آور ہوتے رہے ہیں

ڈیرہ اسماعیل خان میں نامعلوم افراد نے فائرنگ کر کے ایک ڈپٹی سپرنٹنڈنٹ پولیس کو ان کے ساتھی سمیت قتل کر دیا ہے۔

پولیس اہلکاروں نے بی بی سی کو بتایا کہ ڈیس ایس پی بہاول خان اپنے دوست ہارون کے ہمراہ موٹر سائیکل پر جا رہے تھے کہ اس دوران زنانہ ہستپال کے قریب موٹر سائیکل پر سوار نامعلوم افراد نے ان پر فائرنگ کر دی۔

بہاول خان کو فوری طور پر ہسپتال لے جایا گیا لیکن وہ زخموں کی تاب نہ لا کر دم توڑ گئے۔ کچھ ہی دیر بعد ان کا دوست بھی ہلاک ہو گیا۔ اس واقعے کے بعد پولیس نے علاقے کو گھیرے میں لے لیا اور شہر کے داخلی اور خارجی راستوں پر چیکنگ بڑھا دی گئی ہے۔

پولیس حکام کے بقول ان کی کسی سے دشمنی نہیں تھی لیکن پولیس اہلکار اس علاقے میں اکثر دہشت گردوں کے نشانے پر رہتے ہیں۔

بہاول خان کی نمازِ جنازہ ساڑھے 11 بجے پولیس لائنز میں ادا کی جا رہی ہے۔ ان کا تعلق ڈیرہ اسماعیل خان کے ایک مضافاتی علاقے ڈھلہ سے تھا۔

اس سے پہلے بھی پولیس اہلکاروں پر حملے ہو چکے ہیں۔ اسی سال جنوری میں قیصر جہاں نامی ایک ہیڈ کانسٹیبل کو ان کے دو بھائیوں اور ایک ساتھی سمیت ہلاک کر دیا گیا تھا۔ ان کے بارے میں پولیس کا کہنا تھا کہ قیصر جہاں انتہائی قابل پولیس اہلکار تھے اور انھوں نے ٹارگٹ کلنگ کے کئی واقعات کی کامیاب چھان بین کی تھی جس وجہ سے انھیں دھمکیاں موصول ہو رہی تھیں۔

اسی بارے میں