بھتیجے کے ہاتھوں چچا سمیت خاندان کے دس افراد قتل

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption گل احمد ن اس سے قبل انپے اہلِ خانہ کو بھی قتل کیا تھا

پاکستان کے صوبہ خیبر پختونخوا کے ضلع چارسدہ کے علاقے تنگی میں گل احمد سیّد نامی شخص نے اپنے چچا سمیت خاندان کے دس افراد کو فائرنگ کر کے قتل کر دیا ہے۔

تنگی پولیس سٹیشن کے محرر گلزار خان نے بی بی سی کو بتایا کہ یہ واقعہ سنیچر کی شب ساڑھے تین بجے پولیس سٹیشن سے 12 کلومیٹر دور اورنگ زیب قلعہ داؤود کلئ نامی گاؤں میں پیش آیا۔

ان کا کہنا تھا کہ گل احمد نے اپنے گھر والوں کی رضامندی کے بغیر چچا جمال کی بیٹی سے زبردستی منگنی کی تھی۔ والدین سے اسی معاملے پر جھگڑے کے باعث گل احمد نے 28 نومبر 2014 کو اپنے والدین اور بھائی سمیت گھر کے پانچ افراد کو قتل کر دیا تھا۔

پولیس کے مطابق گل احمد اپنے اہلِ خانہ کو قتل کرنے کے بعد علاقہ غیر فرار ہو گئے تھے تاہم ان کے چچا نے اب انھیں اپنے گھر میں پناہ دے رکھی تھی۔

’گل احمد مفرور ملزم ہے اور کبھی کبھی اپنے چچا کے گھر علاقہ غیر سے آکر رہتا تھات گذشتہ شب بھی وہ ان کے گھر آیا۔‘

پولیس کا کہنا ہے کہ مبینہ طور پر گل احمد کے ہاتھوں چچا اور ان کے خاندان کا قتل شادی کے مسئلے کی وجہ سے ہی ہوا۔ ہلاک ہونے والے 10 افراد میں چار خواتین اور ایک چودہ سالہ لڑکی بھی شامل ہے۔

حکام کے مطابق مقتولین کی لاشیں پوسٹ مارٹم کے لیے تنگی ہسپتال پہنچا دی گئی ہیں۔

اسی بارے میں