’تیراہ میں فورسز سے جھڑپ میں پانچ دہشت گرد ہلاک‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption پاکستانی فوج اس علاقے میں خیبر ون اور خیبر ٹو کے نام سے کارروائیاں کر رہی ہے

پاکستان کے قبائلی علاقے خیبر ایجنسی میں سکیورٹی فورسز نے ایک جھڑپ کے دوران پانچ دہشت گردوں کو ہلاک کرنے کا دعویٰ کیا ہے۔

سرکاری ریڈیو نے سکیورٹی ذرائع کے حوالے سے خبر دی ہے کہ خیبر ایجنسی کی وادیِ تیراہ میں اتوار کی صبح فورسز اور دہشت گردوں کے درمیان ہونے والی جھڑپوں میں کم ازکم پانچ دہشت گرد ہلاک ہو گئے۔

بتایا گیا ہے کہ اس کارروائی میں تین سکیورٹی اہلکار بھی زخمی ہوئے جنھیں سی ایم ایچ پشاور منتقل کر دیا گیا ہے۔

خیال رہے کہ خیبر ایجنسی میں سکیورٹی فورسز کی طرف سے آپریشن خیبر ون اور خیبر ٹو کے نام سے شدت پسندوں کے خلاف کاروائیوں کا سلسلہ جاری ہے۔ فوج کا کہنا ہے کہ ان کاروائیوں کے دوران ایجنسی کے بیشتر مقامات کو شدت پسندوں سے صاف کردیا گیا ہے۔

خیبر ایجنسی تین سب ڈویژنوں باڑہ، جمرود اور لنڈی کوتل پر مشتمل ہے اور یہاں گذشتہ سال اکتوبر میں باقاعدہ فوجی آپریشن شروع کیا گیا تھا جبکہ اس سے پہلے بھی وادی تیراہ میں سکیورٹی فورسز کی کارروائیاں جاری تھیں۔

اس فوجی آپریشن اور سکیورٹی فورسز کی کارروائیوں کی وجہ سے مختلف علاقوں سے لوگ بڑے پیمانے پر نقلِ مکانی کرنے پر مجبور ہوئے۔

رواں ماہ کے آغاز پر حکومتِ پاکستان نے اقوام متحدہ کے تعاون سے قبائلی علاقوں میں شدت پسندی سے متاثرہ 20 لاکھ بےگھر افراد کی واپسی کے ایک جامع منصوبے کا اعلان کیا تھا جس کے تحت سنہ 2016 کے اختتام تک سب کو واپس بھیج دیا جائے گا۔

اسی بارے میں