’پاک چین سرمایہ کاری کے منصوبوں پر سیاست نہیں کریں گے‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption آصف علی زرداری کا کہنا تھا کہ ’لیاری پیپلز پارٹی کا قلعہ تھا اور رہے گا‘

پاکستان کے سابق صدر اور پیپلز پارٹی کے شریک چیئرمین آصف علی زرداری نے کہا ہے کہ پاکستان اور چین کے درمیان سرمایہ کاری کے منصوبوں کو کسی حال میں بھی پٹڑی سے اترنے نہیں دیں گے۔

اتوار کو کراچی کے علاقے لیاری کے کِکری گراؤنڈ میں پیپلز پارٹی کے جلسۂ عام سے خطاب کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ پاکستان اور چین کے درمیان طے پانے والے سرمایہ کاری کے منصوبوں میں بلوچوں کے حقوق کا بھی تحفظ کیا جائے گا۔

انھوں نے کہا کہ پیپلزپارٹی چین کی سرمایہ کاری کے منصوبوں پر سیاست نہیں کرے گی۔

ان کا کہنا تھا کہ ان منصوبوں سے کسی کو خوفزدہ ہونے کی ضرورت نہیں ہے اور نہ ہی آنے والی ترقی سے کسی کو نقصان ہوگا۔

ملک بھر میں کنٹونمنٹ بورڈز میں ہونے والے بلدیاتی انتخابات میں پیپلز پارٹی صرف 7 نشستیں جیت پائی ہے، اس صورتحال میں پیپلز پارٹی کی جانب سے آئندہ عام انتخابات کی تیاری کا اعلان بھی کیا گیا۔

آصف علی زرداری کا اس حوالے سے کہنا تھا کہ پیپلز پارٹی کا یہ جلسہ آئندہ انتخابات کی جانب سفر ہے اور جلد ہی پیپلزپارٹی جنوبی پنجاب، گلگت بلتستان اور جموں و کشمیر میں بھی جلسے کرے گی۔

انھوں نے کہا کہ پیپلز پارٹی نے لیاری کے جلسے کے ذریعے آئندہ انتخابات کی تیاری کا آغاز کر دیا ہے۔

کارکنوں سے خطاب میں آصف علی زرداری نے کہا کہ پیپلزپارٹی کے کارکنوں کو مایوس ہونے کی ضرورت نہیں ہے۔ انھوں نے کہا: ’ایک وقت وہ بھی تھا جب بے نظیر بھٹو کی قیادت میں پیپلزپارٹی نے صرف 14 نشستیں جیتی تھی اور اس کے بعد اگلے انتخابات میں حکومت بنائی تھی۔‘

انھوں نے پاکستان تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ ’کپتان کو ایک الیکشن کا دکھ ہے جبکہ ہر الیکشن میں پیپلز پارٹی کا مینڈیٹ چوری کیا گیا۔‘

آصف علی زرداری نے اس امر کا بھی اظہار کیا کہ ’لیاری امن کا گہوارہ تھا اور ایک بار پھر اسے امن کا گہوارہ بنایا جائے گا۔‘ ان کا کہنا تھا کہ ’لیاری پیپلز پارٹی کا قلعہ تھا اور رہے گا۔‘

آصف علی زرداری نے بھارت کے حوالے سے سخت الفاظ کا استعمال کرتے ہوئے کہا کہ ’بھارت کشمیریوں کو تنگ کرنا بند کرے‘۔

لیاری میں جلسے سے خطاب کے دوران آصف زرداری نے لیاری کے لیے ایک ارب روپے مالیت کے ترقیاتی پیکج کا اعلان کیا۔ انھوں نے لیاری کے عوام کے لیے ایک ہاؤسنگ سکیم اور بلاول انجنیئرنگ کالج بنانے کا اعلان بھی کیا۔

اسی بارے میں