عمر کے تعین کے لیے عدالتی کمیشن، شفقت حسین کی درخواست مسترد

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption شفقت کے اہلِ خانہ ان کا برتھ سرٹیفکیٹ بھی پیش کر چکے ہیں

پاکستان کی اسلام آباد ہائی کورٹ نے پھانسی کے مجرم شفقت حسین کی عمر کے تعین کے لیے عدالتی کمیشن بنانے کی درخواست مسترد کر دی ہے۔

خیال رہے کہ ایک بچے کے اغوا اور قتل کے مقدمے میں موت کی سزا پانے والے مجرم شفقت حسین کی سزا پر عمل درآمد کو اسلام آباد ہائی کورٹ نے گذشتہ منگل کو روک دیا تھا۔

شفقت حسین کی عمر کا معمہ

پھانسی کے معاملے پر سیاست نہ کریں

شفقت حسین کے مقدمے کی پیروی کرنے والی سماجی تنظیم جسٹس پروجیکٹ پاکستان کے اہلکار شہاب صدیقی نے بی بی سی کو بتایا کہ اسلام آباد ہائی کورٹ نے پیر کی صبح اپنا محفوظ فیصلہ سناتے ہوئے شفقت حسین کی عمر کے تعین کے لیے عدالتی کمیشن تشکیل دینے کی درخواست مسترد کر دی۔

انھوں نے بتایا کہ ’عدالت نے جمعے کو اپنا فیصلہ محفوظ کیا تھا، ہم نے تحریری اور زبانی دونوں دلائل مکمل کیے تھے، عدالت نے آج اپنے فیصلے میں کمیشن بنانے کی درخواست مسترد کر دی ہے۔‘

ان کا مزید کہنا تھا کہ ابھی معلوم نہیں کہ عدالت نے کمیشن نہ بنانے کی کیا وجہ بتائی ہے۔

’اس کی وجوہات تفصیلی تحریری فیصلے میں سامنے آئیں گی جو ابھی ہمیں موصول نہیں ہوا، اس کے بعد ہی کچھ کہا جا سکتا ہے۔‘

مجرم کی عمر کا تعین کس کا کام

Image caption شفقت کی والدہ مخنی بیگم

پانچ مئی کو عدالت کے روبرو شفقت حسین کے وکیل ڈاکٹر طارق حسن نے انپے دلائل میں کہا تھا کہ ان کے موکل کے خلاف قتل کے مقدمے میں عدالتی کارروائی شروع کی گئی تو وہ کم عمر تھے اور ان کو سزا دینے سے متعلق یہ اہم معاملہ نظر انداز کر دیا گیا۔

اُنھوں نے کہا کہ سپریم کورٹ کے اس ضمن میں واضح احکامات ہیں کہ کسی بھی مجرم کی عمر کا تعین عدالت کرے گی۔

اس موقع پر اسلام آباد ہائی کورٹ کے جج اطہر من اللہ نے اس معاملے کی روزانہ سماعت کا حکم دیا تھا اور کہا تھا کہ مجرم کی عمر کا تعین ایگزیکٹیو آرڈر کے ذریعے نہیں بلکہ جوڈیشل کمیشن کے ذریعے کیا جا سکتا ہے۔

واضح رہے کہ اس سے قبل اسلام آباد میں توہینِ مذہب کے مقدمے میں غیر مسلم لڑکی رمشا مسیح کی عمر کے تعین کے لیے بھی عدالتی حکم پر ایک میڈیکل بورڈ تشکیل دیا گیا تھا جس نے رمشا مسیح کی ہڈیوں کا ٹیسٹ لے کر انھیں نوعمر قرار دیا تھا اور عدالت نے اُن کے خلاف توہین مذہب کا مقدمہ ختم کر دیا تھا۔

اسی بارے میں