سوات میں بغیر اجازت کےانتخابی جلسوں پر پابندی

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

خیبر پختونخوا میں تیس مئی کو ہونے والے بلدیاتی الیکشن کے لیے امیدواروں کے طرف سے تیاریاں زور و شور سے جاری ہے۔

سوات میں پولیس نے تمام امیدواروں کو ہدایت کی ہے کہ وہ شام کا اندھیرا چھانے کے بعد انتخابی مہم سے گریز کریں جبکہ ڈپٹی کمشنر سوات محمود اسلم وزیر نے انتخابی مہم کے سلسلے میں پیشگی اجازت کے بغیر ہر قسم کے عوامی اجتماعات پر بھی مکمل پابندی عائد کردی ہے۔

ضلع سوات میں انتخابات میں حصہ لینے والے امیدواروں کو پولیس کی جانب سے بریفنگ کے دوران یہ ہدایت کی گئی ہے کہ وہ شام کے بعد انتخابی مہم سے گریز کریں اور اندھیرے کے بجائے دن کی روشنی میں اپنی انتخابی مہم چلائیں اور اپنی حفاظت کے لیےلائسنس یافتہ اسلحہ ساتھ رکھیں جبکہ فجر اور عشا کی نماز گھر میں پڑھا کریں اور امیدوار جہاں بھی پروگرام کریں پہلے پولیس کو آگاہ کریں تا کہ سماج دشمن عناصر کی سازشوں کو ناکام بنایا جاسکے۔

بلدیاتی الیکشن میں حصہ لینے والے امیدواروں کی اکثریت پولیس کی جانب سے جاری کی گئی ہدایات پر تحفظات کا اظہار کر رہی ہیں۔

سیدو شریف کے جنرل کونسلر کی نشست کے امیدوار افتخار حسین نے بی بی سی کو بتایا کہ یہ ہدایات شیروں کو آزاد جبکہ بکریوں کو پنجرے میں بند کرنے والی بات ہے۔ تاہم ان کا کہنا تھا کہ میں عوام کی خدمت اور علاقے کے تعمیر و ترقی کےلیےانتخابات میں حصہ لے رہے ہیں اس لیے پولیس کی جانب سے ضابطہ اخلاق کی پاسداری کرتے ہوئے فجر اور عشا کی نماز گھر میں ہی ادا کرتا ہوں اور شام کے بعد انتخابی مہم نہیں چلاتا۔

خونہ چم سے انتخابات میں حصہ لینے والے عمر علی نے بتایا کہ اس سے ان کے انتخابی مہم پر بہت منفی اثر پڑ رہا ہے کیونکہ انتخابات میں حصہ لینے والوں کی اکثریت غریب ہیں اور زیادہ تر دن بھر روزگار میں مصروف رہتے ہیں اگر وہ دن کو انتخابی مہم چلائیں گے تو گھر اور الیکشن کے اخراجات کے لیے پیسے کہاں سے پورے کریں گے۔

ان کے مطابق اگر حالات پر امن نہیں ہیں تو الیکشن کی ضرورت کیا تھی۔ انھوں نے ہر علاقے میں شام کے وقت جگہ جگہ پولیس کو تعینات کرنے کا مطالبہ کیا تا کہ امیدوار بلا خوف و خطر اپنی مہم جاری رکھ سکیں کیونکہ امن و امان کی ذمہ داری حکومت کی ہے۔

اس حوالے سے ڈی ایس پی صدیق اکبر نے بی بی سی کو بتایا کہ ضابطہ اخلاق امیدواروں کے تحفظ کے لیے ہے اور یہ ضابطہ اخلاق الیکشن کمیشن کی طرف سے جاری کیا گیا ہے۔ پولیس نےصرف اسے تفصیل کے ساتھ امیدواروں کے سامنے بیان کیا ہے ان کے مطابق شام کے بعد انتخابی سرگرمیوں سے گریز کی ہدایت حفظ ماتقدم کے طور پر کیاگیا ہے تاکہ علاقے میں امن و امان کی صورتحال مستحکم رہے۔

اسی بارے میں