’سیو دی چلڈرن کے دفاتر بند کرنے کا فیصلہ واپس نہیں لیا‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption ’پاکستان میں کام کرنے والی تمام ملکی اور غیر ملکی غیر سرکاری تنظیموں کا پاکستان میں کام کرنے سے متعلق ازسرنو جائزہ لیا جائے گا‘

پاکستان کے وفاقی وزیر داخلہ چوہدری نثار علی خان نے ان خبروں کی تردید کی ہے کہ بین الاقوامی غیر سرکاری تنظیم سیو دی چلڈرن کے دفاتر بند کرنے سے متعلق فیصلہ واپس لیا گیا ہے۔

وفاقی وزیر داخلہ کے مطابق پاکستان میں ایسی غیر سرکاری تنظیمیں بھی کام کر رہی ہیں جو لوگوں کو حکومت وقت کے خلاف احتجاج کرنے کے بارے نہ صرف لیکچر دیتی ہیں بلکہ اُنھیں اس ضمن میں تربیت بھی دیتی ہیں۔

’مفاد کے خلاف سرگرمیوں کا مطلب کیا؟‘

پارلیمنٹ ہاؤس میں اپے چیمبر میں میڈیا کے نمائندوں سے بات کرتے ہوئے اُنھوں نے کہا کہ حکومت نے ٹھوس شواہد کی بنا پر اس تنظیم کے دفاتر بند کرنے اور غیر ملکی عملے کو 15 روز میں ملک چھوڑنے کے بارے میں نوٹیفکیشن جاری کیا ہے۔

مقامی میڈیا میں یہ خبریں شائع ہوئی تھیں کہ وزارت داخلہ نے سیو دی چلڈرن کے دفاتر سیل کرنے اور اُن پر پابندی عائد کرنے کا فیصلہ واپس لے لیا ہے۔

وزیر داخلہ چوہدری نثار نے کہا کہ پاکستان میں کام کرنے والی تمام ملکی اور غیر ملکی غیر سرکاری تنظیموں کا پاکستان میں کام کرنے سے متعلق ازسرنو جائزہ لیا جائے گا۔

وفاقی وزیر داخلہ کا کہنا ہے کہ پاکستان میں کام کرنے والی ہزاروں ملکی اور غیر ملکی غیر سرکاری تنظیموں کو تین کیٹگریز میں تقسیم کیا گیا ہے جن میں سے وہ تنظیمیں جو حکومت کے ساتھ کیے جاننے والے معاہدے پر عمل پیرا ہیں، اُنھیں گرین کیٹگری میں رکھا گیا ہے اس کے علاوہ جو این جی اوز جنھیں کام کرنے کی اجازت ایک مخصوص علاقے میں دی گئی ہے لیکن وہ دوسرے علاقوں میں بھی کام کررہی ہیں اُنھیں یلیو کیٹگری میں رکھا گیا ہے جبکہ ایسی غیر سرکاری تنظیمیں جو پاکستانی مفاد کے خلاف کام کرر ہی ہیں اُنھیں سرخ کیٹگری میں رکھا گیا ہے۔

اُنھوں نے کہا کہ سرخ کیٹگری میں بہت سی غیر ملکی تنظیمیں بھی شامل ہیں تاہم وزیر داخلہ نے ان تنظیموں کی تعداد نہیں بتائی۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption قامی میڈیا میں یہ خبریں شائع ہوئی تھیں کہ وزارت داخلہ نے سیو دی چلڈرن کے دفاتر سیل کرنے اور اُن پر پابندی عائد کرنے کا فیصلہ واپس لے لیا ہے

چوہدری نثار علی خان کا کہنا تھا کہ میاں نواز شریف نے خارجہ امور سے متعلق وزیر اعظم کے مشیر طارق فاطمی کی سربراہی میں ایک بین الوزارتی کمیٹی تشکیل دی ہے جو اگلے چند ہفتوں میں اپنی شفارشات کو حتمی شکل دے گی جس کے بعد ان غیر سرکاری تنظیموں کے بارے میں پالیسی واضح کی جائے گی۔

چوہدری نثار علی خان کا کہنا تھا کہ پیر کے روز اس کمیٹی کے اجلاس میں یہ تجویز بھی دی گئی ہے کہ غیر سرکاری تنظیموں کو پاکستان میں کام کرنے کی اجازت دینے اور اُن کی کام کی نگرانی کی ذمہ داری اقتصادی امور ڈویژن سے لیکر وزارت داخلہ کو دے دی جائے۔

ایک سوال کے جواب میں وزیر داخلہ کا کہنا ہے کہ جو غیر سرکاری تنظیمیں اپنے مینڈیٹ کے مطابق کام کریں گی اُنھیں حکومت مکمل طور پر تحفظ فراہم کرے گی جبکہ ملکی مفاد کے خلاف کارروائی کرنے والوں کے ساتھ قانون کے مطابق نمٹا جائے گا۔

وزارت داخلہ کے ایک اہلکار نے بی بی سی کو بتایا کہ سیو دی چلڈرن تنظیم کے نمائندے اس بات سے پوری طرح باخبر تھے کہ اُن کے دفاتر سیل کر دیے جائیں گے جس کی بنا پر اُنھوں نے صوبہ خیبر پختونخوا اور بلوچستان میں اپنے دفاتر کو بند کرنے سے بارے میں آگاہ کرد یا تھا۔

اسی بارے میں