بنوں:سکیورٹی فورسز کی فائرنگ سے ہلاک ہونے والوں کی نماز جنازہ

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption بکاخیل پناہ گزین کیمپ کے متاثرین نے سکیورٹی فورسز کے ہاتھوں دو آئی ڈی پیز کی ہلاکت کے واقعہ کے بعد احتجاجًا کیمپ خالی کرانے کا فیصلہ کیا ہے

پاکستان کے نیم خود مختار قبائلی علاقے ایف آر بنوں میں اتوار کو شمالی وزیرستان کے متاثرین کیمپ میں سکیورٹی فورسز کی فائرنگ سے ہلاک ہونے والے دو پناہ گزینوں کی نماز جنازہ ادا کر دی گئی ہے۔

عینی شاہدین کا کہنا ہے کہ مرنے والے افراد کی نماز جنازہ بکاخیل پناہ گزین کیمپ میں سخت سکیورٹی میں ادا کی گئی جس میں مقامی حکام اور شمالی وزیرستان کے پناہ گزینوں کی ایک بڑی تعداد نے شرکت کی۔

انھوں نے کہا کہ مرنے والے افراد کی میتیں ان کے آبائی علاقوں کو روانہ کر دی گئیں ہیں جہاں ان کی تدفین کی جائے گی۔

ادھر بکاخیل پناہ گزین کیمپ کے متاثرین نے سکیورٹی فورسز کے ہاتھوں دو افراد کی ہلاکت کے واقعے کے بعد احتجاجًا کیمپ خالی کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

مقامی لوگوں کا کہنا ہے کہ پیر کو بکاخیل کیمپ میں شمالی وزیرستان کے متاثرین کا ایک بڑا جرگہ منعقد ہوا جس میں متاثرین کے مشران نے کثیر تعداد میں شرکت کی۔ جرگے میں تمام پناہ گزین نے متفقہ طور پر کیمپ خالی کرنے کا فیصلہ کیا۔

تاہم دوسری طرف حکومت اور شمالی وزیرستان کے قبائلی عمائدین کی جانب سے متاثرین کو کیمپ خالی نہ کرانے کے لیے کوششیں جاری ہیں۔

شمالی وزیرستان کے ایک قبائلی مشر ملک گل صالح جان نے بی بی سی کو ٹیلی فون پر بتایا کہ پناہ گزین پہلے ہی سے کیمپ میں پانی اور بجلی جیسی بنیادی ضروریات کے فقدان کی وجہ سے حکومت اور سکیورٹی فورسز کے رویے سے خوش نہیں تھے۔

اسی بارے میں