’چترال میں 33 پل بہہ گئے، پنجاب میں 130 دیہات زیر آب‘

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption این ڈی ایم اے کا کہنا ہے کہ متاثرہ افراد کی تعداد کا ابھی تک تعین نہیں ہو سکا

پاکستان کے قدرتی آفات سے نمٹنے کے لیے قومی ادارے این ڈی ایم اے کا کہنا ہے کہ چترال میں سیلابی ریلوں کی وجہ سے 33 پل بہہ گئے ہیں جبکہ کئی سڑکوں کو مکمل یا جزوی نقصان پہنچا ہے جبکہ صوبہ پنجاب میں 130 دیہات زیر آب آ گئے ہیں۔

این ڈی ام اے کے ترجمان احمد کمال نے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے کہا کہ پل بہہ جانے کے باعث کئی علاقوں تک امدادی سامان کی ترسیل مشکل ہے۔

این ڈی ایم اے نے مزید کہا کہ متاثرہ افراد کی تعداد کا ابھی تک تعین نہیں ہو سکا۔

پاکستانی فوج کے شعبہ تعلقات عامہ آئی ایس پی ار کے مطابق فوج اور ایف سی کی جانب سے دو ہیلی کاپٹر کے ذریعے چترال میں سیلاب سے متاثرہ علاقوں تک کھانے پینے کے سامان کا آٹھ ٹن پہنچا دیا گیا ہے جبکہ 50 افراد کو بھی بچایا گیا ہے۔

دوسری جانب، سرکاری ذرائع ابلاغ کے مطابق وزیرِ اعظم نواز شریف نے چترال میں ہلاکتوں اور نقصان پر افسوس کا اظہار کیا ہے اور این ڈی ایم اے کو فوری وہاں فوری امداد بھیجنے کی ہدایت کی ہے۔

احمد کمال نے بی بی سی کو مزید بتایا کہ پنجاب میں کے ضلع لیہ میں 70 گاؤں، راجن پور میں 50 اور مظفرگڑھ کے 10 گاؤں زیرِ آب آئے ہیں۔

’دریائے سندھ اور کابل کے علاوہ تمام دریا میں پانی کی سطح معمول پر ہے اور یہ مزید کم ہو رہی ہے۔ دریائے راوی، چناب، ستلج اور جہلم میں پانی کی سطح معمول پر ہے۔ ان دریاؤں میں جو پانی بھارت سے آرہا ہے اس سے فی الحال سیلاب کا خدشہ نہیں ہے۔‘

مزید تفصیل بتاتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ دریائے سندھ پر واقع کالا باغ، چشمہ اور تونسہ بیراج پر درمیانی سطح کے سیلاب کی صورتِ حال ہے۔

’صوبے پنجاب کے ضلع میانوالی میں واقع تونسہ پر پانی کی سطح چڑھ رہی ہے جبکہ باقی تمام مقامات پر کم ہو رہا ہے۔‘

احمد کمال نے بتایا کہ چترال میں موسم کی خرابی، رابطے منقطع ہونے سے اور عید کی چھٹیوں کی وجہ سے چترال کے کئی علاقوں تک رسائی مشکل ہے۔ تاہم قدرتی آفات سے نمٹنے کے صوبائی ادارے کو امدادی سامان پہنچانے کی ہدایت دے دی گئی ہے۔

’میری محمکہ موسمیات سے بات ہوئی تھی اور ان کا کہنا تھا کہ چترال میں ایک غیر معمولی صورتِ حال پیدا ہوئی کہ سیلابی ریلوں کے ساتھ ساتھ گرم مون سون بارش نے گلیشئرز کے پگھلنے کا عمل شروع کیا جس کی وجہ سے پانی کا بہاؤ بہت زیادہ تھا۔‘

انھوں نے خدشہ ظاہر کیا کہ ان گلیشئرز کے پگھلنے کی وجہ سے مزید نقصان ہو سکتا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ epa
Image caption ڈی سی طارق حسین کے مطابق وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان نے ضلعے میں فلڈ ایمرجنسی کے نفاذ کا اعلان کیا ہے

خیبر پختونخوا کی صوبائی قدرتی آفات سے نمٹنے کے ادارے کی پریس ریلیز کے مطابق چترال میں سات سڑکوں کو بحال کر دیا گیا ہے جبکہ ادارے کی امدای ٹیمیں چترال کے لیے روانہ ہو گئی ہیں۔

احمد کمال نے باقی ملک کی صورتِ حال بتاتے ہوئے کہا کہ دریائے کابل میں نوشہرہ کے مقام پر درمیانے درجے کا سیلاب ہے۔ ’کل ایک لاکھ گیارہ ہزار کیوسک پانی تھا اورگر کے پچانوے ہزار کیوسک ہے اور پانی مزید گرے گا۔‘

’تربیلا ڈیم کی زیادہ سے زیادہ گنجائش 1550 فٹ ہے۔ ہمارے پاس 1526 کی سطح ہے۔ ابھی چوبیس فٹ کی گنجائش ہے۔‘

ان کا مزید کہنا تھا کہ منگلا ڈیم میں بھی ابھی نو فٹ کی گنجائش ہے لیکن انھوں نے ساتھ ساتھ متنبہ کیا کہ اہم بات یہ ہے کہ ان دونوں میں پانی کی روک تھام اور چھوڑنے کے عمل میں احتیاط کی جائے گی تاکہ سیلاب کی صورتِ حال پیدا نہ ہو۔

این ڈی ایم اے کے ترجمان احمد کمال کہتے ہیں کہ ’آپ قدرت کو روک نہیں سکتے لیکن نقصان کو کم کرنے کی کوشش ضرور کی جا سکتی ہے۔‘

صحافی انور شاہ کے مطابق پاکستان کے شمالی علاقے گلگت بلتستان کےضلع گانچھے میں بارش کے نتیجے میں آنے والے سیلاب سے دو افراد ہلاک جبکہ سو سے زائد مکانات کو نقصان پہنچا ہے۔

ضلع گانچھے کے ڈپٹی کمشنر طارق حسین نے بی بی سی کو بتایا کہ ضلع گانچھے میں سیلاب سے بہت نقصان ہوا ہے اور گانچھے میں تلھےنامی گاؤں کاگذشتہ پندرہ دنوں سے دیگر علاقوں سے زمینی رابطہ منقطع ہیں جہاں 2200 کے قریب گھرانے آباد ہیں اور دریائے تلھے میں پانی کی سطح بلند ہے۔

ڈی سی طارق حسین کے مطابق وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان نے ضلعے میں فلڈ ایمرجنسی کے نفاذ کا اعلان کیا ہے اور امدادی کارروائیاں تیز کرنے کی ہدایت جاری کی ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ epa
Image caption آئی ایس پی ار کے مطابق فوج اور ایف سی کی جانب سے دو ہیلی کاپٹر کے ذریعے چترال میں سیلاب سے متاثرہ علاقوں تک کھانے پینے کے سامان کا آٹھ ٹن پہنچا دیا گیا ہے جبکہ 50 افراد کو بھی بچایا گیا ہے

کراچی سے ہمارے نامہ نگار احمد رضا کے مطابق حکومت سندھ نے کہا ہے کہ صوبے میں سیلاب کا فی الوقت کوئی خطرہ نہیں اور بندوں کی صورتحال تسلی بخش ہے تاہم گڈو اور سکھر بیراج کے کچے کے علاقے میں آباد لوگوں سے کہا گیا ہے کہ وہ کسی ممکنہ خطرے کے پیش نظر محفوظ مقامات پر منتقل ہوجائیں۔

صوبائی سیکریٹری آبپاشی سید ظہیر حیدر شاہ نے بی بی سی اردو سروس سے بات کرتے ہوئے کہا کہ رواں ہفتے کے اختتام پر گڈو اور سکھر بیراج سے پانچ لاکھ کیوسک پانی کا ریلہ گزرنے کا امکان ہے جبکہ دونوں بیراجوں سے دس سے بارہ لاکھ کیوسک پانی گزرنے کی گنجائش موجود ہے۔

’ہم نے احتیاطاً دریا کے ساتھ ساتھ آباد لوگوں سے درخواست کی ہے کہ آپ برائے مہربانی اوپر چلے جائیں تاکہ کسی بھی قسم کے جانی اور مالی نقصان سے بچا جاسکے۔‘

انہوں نے کہا کہ محکمہ آبپاشی، محکمہ موسمیات سے مسلسل رابطے میں ہے اور اسکے مشورے سے بارشوں کی صورتحال کے مطابق ہر سات دن بعد سیلاب کی پیش گوئی جاری کی جائے گی۔

حکومت سندھ نے دریائے سندھ میں سیلابی صورتحال کے پیش نظر گڈو، سکھر اور کوٹڑی بیراجوں پر کنٹرول رومز قائم کردیے ہیں جبکہ صوبائی سیکریٹریٹ کراچی میں مرکزی کنٹرول روم قائم کیا گیا ہے۔

اسی بارے میں