’عمران خان کو پارٹی رکنیت ختم کرنے میں مشکلات کا سامنا‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption ’ پارٹی کے چیئرمین سے مزید مشاورت کی جائے گی‘

پاکستان تحریک انصاف کے رہنما جسٹس ریٹائرڈ وجیہہ الدین نے کہا ہے کہ پارٹی کے سربراہ عمران خان کو وزیراعلیٰ خیبر پختونخوا پرویز خٹک، پارٹی کے جنرل سیکریٹری جہانگیر ترین اور دیگر دو افراد کو اُن کے عہدوں سے ہٹانے اور پارٹی کی رکنیت ختم کرنے کے حوالے سے مشکلات کا سامنا ہے۔

جمعے کو اسلام آباد کے علاقے بنی گالہ میں پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان سے ملاقات کے بعد پارٹی کے سنیئیر رہنما حامد خان کے ہمراہ میڈیا کے نمائندوں سے بات کرتے ہوئے اُنھوں نے کہا کہ ان چار رہنماوں کی پارٹی رکنیت ختم کرنے کے طریقہ کار طے کرنے کے لیے پارٹی کے چیئرمین سے مزید مشاورت کی جائے گی۔

واضح رہے کہ عمران خان نے پارٹی انتخابات کے دوران شکایات کے ازالے کے لیے جسٹس ریٹائرڈ وجہیہ الدین کی سربراہی میں ایک کمیشن تشکیل دیا تھا۔

کمیشن نے اپنی سفارشات میں کہا تھا کہ پارٹی کے جنرل سیکریٹر ی جہانگیر ترین اور وزیراعلیٰ خیبر پختونخوا پرویز خٹک نے پارٹی میں اپنے عہدے بچانے کے لیے قواعدو ضوابط کی خلاف ورزیاں کرنے کے ساتھ ساتھ ووٹ لینے کے لیے پیسوں کا استعمال بھی کیا ہے اس لیے ان سمیت چار افراد کو پارٹی کے عہدوں سے فارغ کردیا جائے تاہم کمیشن کی ان سفارشات پر عمل درآمد نہیں ہوا۔

جہانگیر ترین صنعت کار بھی ہیں اور اُن کا اپنا جہاز بھی ہے جو پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان کے استعمال میں بھی رہتا ہے۔

جسٹس ریٹائرڈ وجیہہ الدین کا کہنا تھا کہ وہ پارٹی کے نظریاتی کارکنوں کے ساتھ ہیں اور پارٹی میں قبضہ گروپ کے ساتھ نہیں ہیں۔

اُنھوں نے کہا کہ اگر پارٹی کے ساکھ کو نقصان پہنچانے یا اسے کمزور کرنے کی کوشش کی گی تو وہ عمران خان کے شانہ بشانہ کھڑے ہوں گے۔

ایک سوال کے جواب میں جسٹس ریٹارئرڈ وجیہہ الدین کا کہنا تھا کہ سنہ 2013 کے عام انتخابات میں مبینہ دھاندلی کی تحقیقات کے حوالے سے عدالتی کمیشن کے فیصلوں میں کچھ سقم ضرور موجود ہیں۔

Image caption مولانا فضل الرحمنٰ نے وزیراعظم نواز شریف سے تحریک انصاف کے ارکانِ اسمبلی کو ڈی سیٹ کرنے کے معاملے پر ملاقات کی ہے

دوسری جانب چیف الیکشن کمشنر نے پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان کی طرف سے 2013 کے انتخابات میں مبینہ دھاندلی کے الزامات کی تحقیقات کرنے والے عدالتی کمیشن کے نتائج کے حوالے سے لکھے گئے خط پر الیکشن کمیشن کے ارکان سے مشاورت کی ہے جس کے بارے میں جلد فیصلہ کر لیا جائے گا۔

پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین کے چیف الیکشن کمشنر کو ریٹرنگ افسران کے خلاف فوجداری مقدمات درج کروانے کی استدعا کی ہے۔

اُدھر وزیر اعظم میاں نواز شریف سے جمعیت علمائے اسلام کے رہنما مولانا فضل الرحمنٰ نے ملاقات ہے جس میں وزیر اعظم نے اُن سے پاکستان تحریک انصاف کے اراکین قومی اسمبلی کو ڈی سیٹ کرنے کے حوالے سے قرارداد واپس لینے کی درخواست کی ہے۔

مولانا فضل الرحمن کا کہنا ہے کہ اُن کی جماعت اس قرارداد پر آئین کے مطابق فیصلہ چاہتی ہے۔

اسی بارے میں