پاکستان میں افغان مہاجرین کے قیام میں مزید دو سال کی توسیع کی تجویز

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption افغان شہریوں کی قیام کی مدت اس سال کے آخر تک ختم ہورہی تھی تاہم پاکستان میں اس معاہدے کا کوئی اعلان نہیں کیا گیا

افغانستان کے دارالحکومت کابل میں پاکستان، افغانستان اور مہاجرین کےلیے اقوام متحدہ کے ادارے یواین ایچ سی آر پر مشتمل سہ فریقی کمیشن کے دو روز سے جاری اجلاس کے اختتام پر اس تجویز پر اتفاق کیا گیا ہے کہ پاکستان کے مختلف شہروں میں تقریباً گذشتہ تین دہائیوں سے زیادہ عرصے سے مقیم افغان مہاجرین کی قیام میں مزید دو سال کی توسیع کی جائے۔

یہ تجویز کانفرنس میں شامل پاکستانی وفاقی وزیر برائے سیفران عبد القادر بلوچ پاکستان کی وفاقی کابینہ میں پیش کریں گے جس میں اس پر حتمی فیصلہ کیا جائے گا۔

افغان شہریوں کی قیام کی مدت اس سال کے آخر تک ختم ہو رہی تھی جس کے بارے میں ابھی تک کوئی حتمی اعلان نہیں کیا گیا۔

افغان خبر رساں ادارے اے آئی پی کے مطابق اجلاس میں افغانستان کے وزیر برائے مہاجرین سید حسین عالمی بلخی، پاکستان کے وفاقی وزیر برائے سیفران عبد القادر بلوچ اور یو این ایچ سی آر کے نمائندوں نے شرکت کی۔

انھوں نے کہا کہ پاکستان نے اس بات کی یقین دہانی کرائی ہے کہ افغان شہروں کو مقررہ مدت سے پہلے ان کے ملک سے زبردستی نہیں نکالا جائے گا جب تک وہ خود رضاکارانہ طورپر جانے کےلیے تیار نہ ہوں۔

Image caption افغان حکومت کے مطابق پاکستان میں ایک اندازے کے مطابق اس وقت تقریباً 25 لاکھ افغان مہاجرین آباد ہیں

انھوں نے مزید کہا کہ ایک سو رکنی افغان وفد بہت جلد پاکستان کا دورہ کرے گا جہاں وہ غیر قانونی طورپر مقیم افغان شہریوں کی نشاندہی کرے گا۔

افغان خبر رساں ادارے اے آئی پی کے مطابق پاکستان کے وفاقی وزیر برائے سیفران عبدالقادر بلوچ نے میڈیا کے نمائندوں کو بتایا کہ معاہدے کے رو سے افغان شہری سنہ 2017 کے اختتام تک پاکستان میں رہ سکتے ہیں اور اس دوران انھیں زبردستی نہیں نکالا جائے گا۔

انھوں نے افغانستان میں پائے جانے والے پاکستان مخالف جذبات کے بارے میں کہا کہ کابل میں پاکستان کے خلاف مظاہرے منعقد کیے گئے اور اس کے پرچم اور کرنسی کو نذرآتش کیا گیا جس سے دونوں ممالک کے تعلقات یقینی طورپر متاثر ہوں گے۔

عبدالقادر بلوچ نے کہا کہ ایسے اقدامات نہ صرف دونوں ممالک کے درمیان تلخی کا سبب بن رہا ہے بلکہ اس سے پاکستان میں رہنے والے افغان شہریوں کےلیے بھی مشکلات پیدا ہوں گی۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption افغان مہاجرین کے قیام میں توسیع ایسے وقت کی گئی ہے جب پاکستان اور افغانستان کے درمیان تعلقات کشیدہ بتائے جاتے ہیں

افغان حکومت کے مطابق پاکستان میں ایک اندازے کے مطابق اس وقت تقریباً 25 لاکھ افغان مہاجرین آباد ہیں جن میں دس لاکھ شہری غیر قانونی طورپر رہائش پزیر ہیں۔

خیال رہے کہ گزشتہ سال دسمبر میں پشاور میں آرمی پبلک سکول پر ہونے والے طالبان حملے کے بعد پاکستان بھر میں غیر قانونی طورپر رہنے والے افغان شہریوں کے خلاف بڑے پیمانے پر کاروائیوں کا آغاز کیا گیا تھا۔ ان کاروائیوں میں سینکڑوں افراد کو گرفتار کرکے ان کو واپس اپنے وطن بے دخل کیا گیا تھا۔ یہ اپنی نوعیت کی پہلی ایسی کاروائی تھی جس سے اس وقت ایسا تاثر مل رہا تھا کہ شاید پاکستان مہاجرین کے قیام میں مزید توسیع نہیں کرے گا۔

اسی بارے میں