’جنگ بندی کی خلاف ورزیوں کی مشترکہ تحقیقات پر اتفاق‘

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption بھارت اور پاکستان کے درمیان یہ بات چیت ایک ایسے وقت میں ہوئی ہے جب کنٹرول لائن پر مسلسل گولہ باری سے ماحول کشیدہ ہے

پاکستان اور بھارت نے ورکنگ باؤنڈری پر جنگ بندی کے معاہدے کی پاسداری کرنے اور کنٹرول لائن اور ورکنگ باونڈری پر جنگ بندی کی خلاف ورزیوں کی مشترکہ تحقیقات کرنے پر اتفاق کیا ہے۔

آل انڈیا ریڈیو کے مطابق یہ فیصلہ نئی دہلی میں پنجاب رینجرز اور بھارتی سرحدی سکیورٹی فورس کے ڈائریکٹر جنرلز کے درمیان تین روزہ بات چیت کے آخری دن کیا گیا ہے۔

اس بات چیت کے دوران اس بات پر پہلے ہی اتفاق ہو چکا ہے کہ سرحد پر کسی جانب سے فائرنگ کی صورت میں دوسری جانب سے فوری طور جوابی کارروائی نہیں کی جائے گی اور پہلے فائرنگ کرنے والے فریق سے رابطہ کیا جائے گا تاکہ صورتحال کو فوری طور پر قابو میں کیا جا سکے۔

ریڈیو پاکستان نے پنجاب رینجرز کے ترجمان کے حوالے سے کہا ہے کہ بات چیت خوشگوار ماحول میں ہوئی اور فریقین نے متعلقہ مسائل پر تفصیلی تبادلۂ خیال کیا۔

بھارتی ریڈیو کے مطابق دونوں طرف کے اعلیْ حکام نے اس بات چیت کی تفصیلات پر دستخط بھی کیے۔

پنجاب رینجرز کے ترجمان کے مطابق پاکستان نے فلیگ میٹنگ کے دوران بھارتی فوج کے ہاتھوں رینجرز اہلکاروں کی ہلاکت کا معاملہ اٹھایا۔

یہ واقعہ گذشتہ برس کے آخر میں ورکنگ باؤنڈری پر واقع شکر گڑھ سیکٹر میں پیش آیا تھا اور پاکستان کے چناب رینجرز کے حکام نے بی ایس ایف پر بلااشتعال فائرنگ کر کے اپنے دو اہلکاروں کی ہلاکت کا الزام لگایا تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption ایل او سی اور ورکنگ باونڈری پر جنگ بندی کی خلاف ورزیوں کی وجہ سے سرحد کے دونوں جانب عام شہری بھی ہلاک ہوئے ہیں

رینجرز کے ترجمان نے بتایا کہ بی ایس ایف کے ڈائریکٹر جنرل ڈی کے پاٹھک نے پاکستانی جنرل کو یقین دلایا کہ مستقبل میں ایسے واقعات پیش نہیں آئیں گے۔

ترجمان کے مطابق بات چیت میں فریقین نے جہاں جنگ بندی معاہدے پر عملدرآمد یقینی بنانے پر اتفاق کیا وہیں سمگلنگ کے خاتمے کے لیے سرحدی کنٹرول کا طریقہ کار وضع کرنے پر بھی اتفاق رائے پایا گیا۔

بھارت اور پاکستان کے درمیان یہ بات چیت ایک ایسے وقت میں ہوئی ہے جب کنٹرول لائن پر مسلسل گولہ باری سے ماحول کشیدہ ہے اور دونوں ممالک ایک دوسرے پر فائر بندی کی خلاف ورزیوں کا الزام لگاتے رہے ہیں۔

تاہم جمعے کو بھارت کے وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ نے ڈائریکٹر جنرل عمر فاروق برکی کی قیادت میں پاکستان رینجرز کے وفد سے ملاقات کے دوران یقین دلایا تھا کہاب بھارت سرحد پر گولہ باری میں پہل نہیں کرے گا۔

خیال رہے کہ پاکستان کا کہنا ہے کہ گذشتہ ڈھائی ماہ کے دوران بھارت کی جانب سے لائن آف کنٹرول اور ورکنگ باؤنڈری پر سیزفائر کی 60 سے زیادہ مرتبہ خلاف ورزی کی گئی ہے جبکہ بھارت کی جانب سے بھی پاکستان پر ایسے ہی الزامات لگائے جاتے رہے ہیں۔

جنگ بندی کی ان خلاف ورزیوں کی وجہ سے سرحد کے دونوں جانب شہریوں کی ہلاکتیں بھی ہوئی ہیں۔

اسی بارے میں