راولپنڈی میں شدت پسندوں کے خلاف کارروائی، چھ ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption سرچ آپریشن میں فوج اور رینجرز اہلکار بھی شامل ہو گئے ہیں

پاکستان کے دارالحکومت اسلام آباد سے متصل شہر راولپنڈی میں سکیورٹی فورسز نے شدت پسندوں کے خلاف کارروائی کی جس میں دو خواتین سمیت پانچ مبینہ شدت پسند ہلاک اور چار کو گرفتار کر لیا گیا ہے جبکہ ایلیٹ فورس کا ایک اہلکار بھی ہلاک ہوا ہے۔

جمعرات کو پنڈ جُوڑیاں کے علاقے میں علی الصبح کی جانے والے کارروائی میں پولیس کے مطابق انھیں خفیہ اطلاع ملی تھی کے ایک مکان میں بعض شدت پسند موجود ہیں۔

’شجاع خانزادہ کے قتل میں ملوث چار شدت پسند ہلاک‘

جس علاقے میں کارروائی کی گئی ہے وہ گاؤں قاسم ایئر بیس کے قریب واقع ہے۔

پولیس کے مطابق یہ افراد علاقے کے امام مسجد کے گھر پر مقیم تھے۔ بتایا گیا ہے کہ مرنے والوں میں دو بچے بھی شامل ہیں۔

پولیس حکام کے مطابق ایلیٹ فورسز اور محکمہ انسداد دہشت گردی کے اہلکاروں نے علاقے کو گھیرے میں لیا تو ایک گھر سے ان پر فائرنگ کی گئی۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption پولیس نے علاقے کو کوارڈن آف کر کے مزید نفری طلب کر لی ہے

فائرنگ سے ایلیٹ فورس کا سب انسپکٹر ارشاد ہلاک اور دو اہلکار زخمی ہوگئے۔

جوابی کارروائی میں ایک مبینہ دہشت گرد ہلاک اور تین کو زخمی حالت میں گرفتار کر لیا گیا۔

پولیس کے مطابق سابق وزیرِ داخلہ پنجاب شجاع خانزادہ کے قتل کے سلسلے گرفتار ہونے والے ایک ملزم کی نشاندہی پر یہ کارروائی کی گئی۔

پولیس حکام کے مطابق شدت پسندوں نےاپنا لائحہ عمل تبدیل کرتے ہوئے اب ٹارگٹڈ شہروں سے متصل دیہاتوں میں رہائش اختیار کرنا شروع کی ہے تاکہ شہروں میں سکیورٹی فورسز کی تلاشی اور کارروائی سے بچ سکیں۔

پولیس کے مطابق اب یہ لوگ خاندان کی صورت میں رہتے ہیں تاکہ پولیس کو شبہ نہ ہو۔

اسی بارے میں