کالعدم تنظیموں سے وابستہ سات افراد گرفتار، 20 کروڑ روپے برآمد

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption کالعدم تنظیموں سے وابستہ افراد کی گرفتاری ہنڈی کے کاروبار میں ملوث دو افراد کی گرفتاری کے بعد عمل میں لائی گئی ہے

پاکستان میں قانون نافذ کرنے والے اداروں نے کالعدم تنظیموں سے تعلق رکھنے والے سات مبینہ شدت پسندوں کو گرفتار کر کے اُن کے قبضے سے 20 کروڑ روپے سے زائد رقم برآمد کی ہے جو اُنھیں ہنڈی کے ذریعے مختلف ملکوں سے بھجوائی گئی تھی۔

وفاقی تحقیقاتی ادارے یعنی ایف آئی اے کے اہلکار نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بی بی سی کو بتایا کہ حراست میں لیے جانے والے افراد کا تعلق کالعدم تنظیم لشکر جھنگوی سے ہے اور ان افراد کو صوبہ پنجاب کے شہر فیصل آباد، لیہ، گجرات اور سیالکوٹ سے گرفتار کیا گیا ہے۔

کالعدم تنظیمیں عیدالاضحیٰ کے دوران متحرک

اہلکار کے مطابق ان افراد کی گرفتاری ہنڈی کے کاروبار میں ملوث دو افراد کی گرفتاری کے بعد عمل میں لائی گئی ہے جنھیں ایف آئی اے کے حکام نے فیصل آباد اور گجرات سے گرفتار کیا تھا۔

اہلکار کے مطابق افراد سے جو ابتدائی تفتیش ہوئی ہے اس میں اُنھوں نے اس بات کا اعتراف کیا ہے کہ اُنھیں محرم الحرام اور اس کے بعد بھی صوبہ پنجاب کے بڑے شہروں میں شدت پسندی کی کارروائیاں کرنی تھی اور یہ رقم اسی کاموں میں استعمال ہونا تھی جس میں خودکش حملہ آوروں کے اہل خانہ کو پیسے دینے کے ساتھ ساتھ اسلحہ اور بارودی مواد بھی خریدا جانا تھا۔

اہلکار کے مطابق گذشتہ ایک ہفتے کے دوران ان افراد کو ہنڈی کے ذریعے خصوصی کوڈ دے کر 20 کروڑ سے زائد کی رقم بھجوائی گئی تھی اور اس رقم میں سے زیادہ حصہ دوبئی، جنوبی افریقہ اور کینیا سے بھجوایا گیا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption کالعدم شدت پسند تنظیموں کے لیے بیرونی امداد شہ رگ کی حثیت رکھتی ہے: پاکستان سپریم کورٹ

اہلکار کے مطابق ابھی تک زیر حراست ملزمان نے رقوم بھجوانے والے افراد کے نام نہیں بتائے ہیں، تاہم اُن کا کہنا ہےکہ وہ ان افراد کے بارے میں کچھ نہیں جانتے اُنھیں تو مقامی قیادت کی طرف سے اطلاع دی گئی تھی کہ فلاں بندے سے جاکر پیسے لے لو۔

وفاقی حکومت کی طرف سے شدت پسندی کے خلاف نیشنل ایکشن پلان کے تحت کالعدم تنظیموں کے بینک اکاونٹ منجمد کرنے کے بعد ان تنظیموں سے تعلق رکھنے والے افراد غیر قانونی طریقوں سے رقم منگواتے ہیں۔

پاکستان کی سپریم کورٹ نے نیشنل ایکشن پلان کے بارے میں ریمارکس دیے تھے کہ کالعدم شدت پسند تنظیموں کے لیے بیرونی امداد شہ رگ کی حثیت رکھتی ہے اور ان کی شہ رگ کاٹ دی جائے تو یہ تنظیمیں خود بخود ختم ہو جائیں گی۔

اسی بارے میں