اسماعیلی بس حملہ کیس کے پبلک پراسیکیوٹر مستعفی

Image caption مئی میں اسماعیلی برادری کی بس پر حملے کے نتیجے میں خواتین سمیت 45 افراد ہلاک ہوگئے تھے

پاکستان کے ساحلی شہر کراچی میں اسماعیلی برادری کی بس پر حملے کے پبلک پراسیکیوٹر محمد خان برڑو اور مبشر مرزا مستعفی ہوگئے ہیں۔

ان سرکاری وکلا کا کہنا ہے کہ حکومت نے ان کو سکیورٹی اور مطلوبہ سہولیات فراہم نہیں کیں۔

صفورا بس حملے کے ملزم کے ’اہم انکشافات‘

اسماعیلی بس حملہ کیس، ملزمان کی شناخت پریڈ

بس پر حملے کے ملزم کے والدین کا عدالت سے رجوع

محمد خان برڑو نے بی بی سی کو بتایا کہ صفوراں واقعے میں شدت پسند تنظیم دولتِ اسلامیہ کے ملوث ہونے کی وجہ سے انھوں نے محکمہ داخلہ کو گزارش کی تھی کہ انھیں رینجرز کی سکیورٹی، محفوظ رہائش گاہ اور 30 لاکھ روپے پروفیشنل فیس ادا کی جائے۔

’محکمہ داخلہ سندھ نے ہماری درخواست سے اتفاق کرتے ہوئے اس کو وزارت قانون کو بھیج دیا، جس میں سے ڈیڑھ لاکھ روپے فیس مقرر کر کے باقی تمام مطالبات کو مسترد کر دیاگیا۔‘

محمد خان برڑو کا کہنا تھا کہ ایسا محسوس ہوتا ہے جیسے وزرات قانون میں کچھ ایسے لوگ موجود ہیں جو نہیں چاہتے کہ اس ملک سے دہشت گردی کا خاتمہ ہو اور اہل پراسیکیوٹر سامنے آ کر ان مقدمات کی پیروی کریں، اس لیے انھوں نے دیگر مطالبات تسلیم نہیں کیے صرف پروفیشنل فیس ڈیڑھ لاکھ روپے مقرر کر دی اور دیگر مطالبات مسترد کر دیے اس صورتحال میں ہمارے لیے یہ ہی بہتر ہے کہ مستعفی ہو جائیں کیونکہ ہم خودکشی کرنا نہیں چاہتے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption پولیس کے مطابق واقعے میں ملوث ہونے کے الزام میں گرفتار ملزمان کا تعلق دولتِ اسلامیہ سے ہے

یاد رہے کہ کراچی میں انسداد دہشت گردی کے مقدمات کی پیروی کرنے والے سرکاری وکیل نعمت رندھاوا گذشتہ سال فائرنگ کے ایک واقعہ میں ہلاک ہوگئے جبکہ عبدالمعرؤف ایڈووکیٹ نے بیرون ملک پناہ لے رکھی ہے۔

محمد خان برڑو کا کہنا ہے کہ حالات کی سنگینی کی وجہ سے ان کے کئی ساتھی ملک چھوڑنے پر مجبور ہوگئے اور کچھ مارے گئے جس کے بعد اس قسم کے ہائی پروفائل مقدمات میں کوئی بھی پیروی نہیں کرتا انھوں نے قومی مفادات میں یہ ذمہ داری اٹھائی تھی۔

رواں سال مئی میں اسماعیلی برادری کی بس پر حملے کے نتیجے میں خواتین سمیت 45 افراد ہلاک ہوگئے تھے۔

محمد خان برڑو کا کہنا تھا کہ صفوراں واقعے میں عبوری چالان پیش ہو چکے ہیں۔

22 اکتوبر کو تین ملزمان کی ضمانت کی درخواستیں بھی لگی ہوئی ہیں ان کا مستعفی ہونا اس مقدمے پر اثر انداز ضرور ہوگا۔

اسی بارے میں