پاک افغان سرحدی چوکی پر فائرنگ، سات ایف سی اہلکار ہلاک: آئی ایس پی آر

پاکستانی فوج نے ایک بیان میں کہا ہے کہ پاک افغان سرحدی چوکی پر سرحد پار سے فائرنگ کے نتیجے میں ایف سی کےسات اہلکار ہلاک ہوگئے ہیں۔

فوج کے شعبہ تعلقاتِ عامہ آئی اس پی آر کی جانب سے موصول ہونے والی تحریری بیان میں بتایا گیا ہے کہ پاک افغان سرحد پر فائرنگ کا واقعہ منگل کی صبح پیش آیا۔

ٹی ٹی پی کی افغان طالبان سے الحاق کی تردید

پاک افغان تعلقات، نئی گریٹ گیم

پاکستانی سرحد کے قریب دولتِ اسلامیہ

یہ واقعہ انگور اڈہ کے شمال مشرق میں پاکستانی حدود میں قبائلی علاقے شمالی وزیرستان میں پیش آیا۔

خیال رہے کہ پاکستانی حکام کا دعویٰ ہے کہ کالعدم تحریکِ طالبان پاکستان کے سربراہ ملا فضل اللہ افغانستان میں روپوش ہیں۔

پاکستان نے افغان حکام سے متعدد بار ملا فضل اللہ کی حوالگی کا مطالبہ بھی کیا۔

پشاور میں گذشتہ سال دسمبر میں ہونے والے سکول حملے کے بعد پاک افغان تعاون میں بہتری دیکھنے کو ملی تھی تاہم افغانستان میں گذشتہ عرصے میں شدت پسند حملوں میں تیزی کے بعد تعلقات میں ایک بار پھر کشیدگی دیکھنے کو ملی۔

گذشتہ ماہ بھی جنوبی وزیرستان میں سکیورٹی فورسز پر حملےمیں چھ اہلکار زخمی ہوئے تھے۔ اس پہلے جنوبی وزیرستان کی سرحد میں واقع علاقے شوال میں شدت پسندوں نے سیکیورٹی فورسز پر حملہ کیا تھا جس میں دو اہلکار ہلاک ہو گئے تھے۔ اس کے بعد سیکیورٹی فورسز نے جوابی کارروائی کی تھی جس میں 14 شدت پسندوں کو ہلاک کر دیا گیا تھا۔

شمالی وزیرستان ایجنسی میں فوجی آپریشن ضرب عضب گذشتہ سال جون میں شروع کیا گیا تھا جس میں حکام کے مطابق تقریباً ساڑھے تین ہزار شدت پسند مارے جا چکے ہیں اور سکیورٹی فورسز کے تین سو اہلکار ہلاک ہوئے ہیں۔

اسی بارے میں