ملاکنڈ:’پولیو مہم سڑک کی تعمیر سے مشروط‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption یوسف کے مطابق روڈ کی تعمیر کے اس مسئلے کے حل تک جرگے کا فیصلہ اٹل ہے اور بچوں کو پولیو کے قطرے نہیں پلائے جائیں گے

پاکستان کے صوبہ خیبر پختونخواہ کے ضلع ملاکنڈ میں مقامی لوگوں نے سڑک کی تعمیر مکمل نہ ہونے تک بچوں کو پولیو کے قطرے پلانے سے انکار کردیا ہے۔

یہ فیصلہ ملاکنڈ کے علاقے خانوڑی میں ہونے والے مقامی جرگے میں علاقے عمائدین کی جانب سے کیاگیا ہے، جس کے بعد اس علاقے کے سینکڑوں بچے پولیو سے بچاؤ کے حفاظتی قطروں سے محروم ہوگئے ہیں۔

ملاکنڈ طلبہ کی کھوٹی قسمت؟

چندہ برائے سڑک

علاقے کے مقامی لوگوں نے بتایا کہ علاقے کے دوسرے قصبے سے روڑ کی تعمیر پر کئی سالوں سے تنازع چلا آ رہا ہے جس کے حل کے لیے ضلعی انتظامیہ سے کئی بار درخواست کی گئی ہے لیکن انتظامیہ مسئلے کے حل میں دلچسپی نہیں لے رہی۔

علاقے کے عمائدین پر مشتمل جرگے میں یہ فیصلہ کیاگیا ہے کہ جب تک روڈ کی تعمیر کا مسئلہ حل نہیں ہوتا تب تک کسی بھی بچے کو پولیو کے قطرے نہیں پلائے جائیں گے اور اگر کسی نے بچوں کو پولیو کے قطرے پلائے تو انھیں علاقہ بدر کیا جائےگا۔

جرگے کے ایک ممبر یوسف نے بی بی سی کو بتایا کہ سنہ 1983 میں بننے والا روڑ تاحال پختگی کے عمل سے محروم ہے اور بار بار منتخب نمائندوں اور انتظامیہ کی توجہ اس جانب مبذول کرائی گئی مگر کوئی شنوائی نہیں ہو سکی ہے، جس سے علاقے کے لوگوں کو سخت مشکلات کا سامنا ہے۔

انھوں نے بتایا کہ اس بابت انتظامیہ کے ساتھ آج منگل کو مذاکرات بھی ہوئے جو ناکام رہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption منگل سے خیبر پختونخواہ میں انسداد پولیو مہم کا آغاز ہو گیا ہے

یوسف کے مطابق روڑ کی تعمیر کے اس مسئلے کے حل تک جرگے کا فیصلہ اٹل ہے اور بچوں کو پولیو کے قطرے نہیں پلائے جائیں گے۔

ان کے مطابق علاقے کے رکن صوبائی اسمبلی محمد علی شاہ اور اس کے بھائی احمد باچا جو ضلع ناظم ہیں وہ بھی اس مسئلے کے حل میں دلچسپی نہیں لے رہے حالانکہ گاؤں کے دو ہزار سے زائد ووٹرز میں سے اکثریت نے ان کو ووٹ دیے ہیں۔

آٹھ ہزار آبادی پر مشتمل اس علاقے میں حالیہ زلزلے میں 20 کے قریب مکانات کو نقصان پہنچا ہے۔

مقامی لوگوں کا کہنا ہے کہ سڑک کی خراب حالت کی وجہ سے اس دور افتادہ علاقے میں امدادی ٹیموں کو آنے میں شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔

خیبر پختونخواہ میں چار روزہ اس مہم کے دوران مجموعی طور پر پانچ سال سے کم عمر 54,77,684 بچوں کو پولیو سےبچاؤ کے قطرے پلائے جانے کا ہدف مقرر کیاگیا ہے۔

اسی بارے میں