سعودی عرب کی جیلوں میں 2308 پاکستانی قید

تصویر کے کاپی رائٹ mofa
Image caption سعودی عرب میں سزا پانے والے اور واپسی کے منتظر زیادہ تر پاکستانی حج اور عمرے کے قواعد کی خلاف ورزی کے مرتکب ہوئے تھے

پاکستان نے کہا ہے کہ اس کے 2308 شہری سعودی عرب کی جیلوں میں سزا کاٹ رہے ہیں جبکہ وہاں موجود 2300 پاکستانی ملک بدری کے منتظر ہیں۔

یہ اعداد و شمار دفترِ خارجہ کے ترجمان قاضی خلیل اللہ نے ہفتہ وار بریفنگ کے دوران ایک سوال کے جواب میں بتائے۔

انھوں نے بتایا کہ سزا پانے والے اور واپسی کے منتظر زیادہ تر پاکستانی حج اور عمرے کے قواعد کی خلاف ورزی کے مرتکب ہوئے تھے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption اگر کسی بھی بےدخل کیے جانے والے شخص کو عارضی سفری نامہ جاری کیا گیا تو اس سفارت کار کے خلاف کارروائی عمل میں لائی جائے گی

خیال رہے کہ گذشتہ روز بھی اسلام آباد میں صحافیوں سے گفتگو میں پاکستانی وزیرِ داخلہ نے بتایا تھا کہ خلیجی ممالک میں سعودی عرب سے ملک بدر ہونے والے پاکستانیوں کی تعداد سب سے زیادہ ہے۔

20 نومبر 2015 کو پاکستان کی قومی اسمبلی کو بتایا گیا تھا کہ گذشتہ تین سالوں کے دوران سعودی عرب میں 38 پاکستانیوں کے سر قلمکیے گئے یہ افراد قتل اور منشیات کے مقدمات میں گرفتار ہوئے تھے۔

وزارتِ خارجہ کی جانب سے جمع کروائے گئے تحریری جواب میں ان افراد کی فہرست بھی پیش کی گئی جن کے سر سعودی عرب میں قلم کیے گئے ہیں تاہم اس بارے میں یہ نہیں بتایا گیا کہ ان افراد کا تعلق کس علاقے ہے۔

اس سے قبل وزارتِ داخلہ کی واضح ہدایات کے باوجود اگر کسی بھی بےدخل کیے جانے والے شخص کو عارضی سفری نامہ جاری کیا گیا تو اس سفارت کار کے خلاف کارروائی عمل میں لائی جائے گی۔

اسی بارے میں