ثنا اللہ زہری نے وزیرِ اعلیٰ کے عہدے کا حلف اٹھا لیا

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption مسلم لیگ (ن) بلوچستان کے صدر نواب ثناء اللہ زہری نے وزیر اعلیٰ کی حیثیت سے حلف اٹھا یا

مسلم لیگ (ن) بلوچستان کے صدر نواب ثنا اللہ زہری نے جمعرات کی شام پاکستان کے صوبہ بلوچستان کے نئے وزیر اعلیٰ کی حیثیت سے حلف اٹھا یا۔ گورنر ہاؤس کوئٹہ میں گورنر بلوچستان محمد خان اچکزئی نے ان سے حلف لیا۔

نواب ثنا اللہ زہری پاکستان کے صوبہ بلوچستان کی اسمبلی سے بلا مقابلہ وزیراعلیٰ جبکہ راحیلہ حمید خان درانی بلا مقابلہ سپیکر منتخب ہوگئی ہیں۔ وہ بلوچستان اسمبلی کی تاریخ میں پہلی منتخب خاتون سپیکر ہیں۔

حلف سے قبل نواب ثنا اللہ زہری کو بلوچستان اسمبلی کے اجلاس میں بلامقابلہ وزیر اعلیٰ منتخب کیا گیا۔

انتخاب کے وقت ایوان میں65اراکین میں سے 54 موجود تھے۔

حزب اختلاف کی دو جماعتوں جے یوآئی اور عوامی نیشنل

تصویر کے کاپی رائٹ APP
Image caption راحیلہ درانی کے پاس وکالت کی ڈگری ہے اور وہ کچھ عرصہ صحافت کے شعبے سے بھی وابستہ رہی ہیں

پارٹی کے اراکین سمیت ایوان میں موجود تمام اراکین نے نواب ثنا اللہ زہری پر اعتماد کا اظہار کیا۔

مری معاہدے کے تحت اب ثنا اللہ زہری وزیراعلیٰ بلوچستان

بلوچستان میں شراکت اقتدار کے حوالے سے مری میں ہونے والے معاہدے کے تحت ثنا اللہ زہری کو ڈھائی سال کے لیے وزیر اعلیٰ منتخب کیا گیا ۔ وزیر اعلیٰ منتخب ہونے کے بعد اسمبلی سے خطاب کرتے ہوئے انھوں نے کہاک

ہ دہشت گردی کو کسی بھی صورت میں قبول نہیں کیا جائے گا۔

ناراض بلوچوں کو مذاکرات کی دعوت دیتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ وہ آئیں اور پاکستان کے فریم ورک میں رہ کر سیاست کریں ۔

وزیر اعلیٰ منتخب ہونے سے قبل نواب ثنا اللہ زہری ڈاکٹر مالک کی کابینہ میں سینیئر وزیر تھے۔

نواب ثناء اللہ زہری 1988ء میں پہلی مرتبہ بلوچستان اسمبلی کے رکن منتخب ہوئے تھے۔

وزیر اعلیٰ کے عہدے پر فائز ہونے کے ساتھ نواب ثناء اللہ زہری دو اہم قبائلی مناصب پر بھی فائز ہیں۔

وہ زہری قبیلے کے سربراہ ہونے کے علاوہ چیف آف جھالاوان ہیں۔

نواب ثناء اللہ زہری گریجوایٹ ہیں وہ پہلی مرتبہ 1988ء میں بلو چستان اسمبلی کے رکن منتخب ہوئے۔ 1997ء کے عام انتخابات کے سوا وہ 1988ء سے مستقل بلوچستان اسمبلی کے رکن منتخب ہوتے چلے آرہے ہیں۔ 1997ء کے عام انتخابات میں انھیں شکست ہوئی تھی ۔وہ سینیٹ کے رکن بھی رہے۔

اسی بارے میں