ڈاکٹر عاصم 14 روزہ ریمانڈ پر نیب کے حوالے

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service

کراچی میں قومی احتساب عدالت نے سابق وفاقی وزیر ڈاکٹر عاصم کو مزید 14 روز کے لیے احتساب بیورو کے حوالے کردیا ہے۔

نیب نے الزام عائد کیا ہے کہ سنہ 2008 میں سٹاک ایسکچینج میں مصنوعی بحران پیدا کرکے بھی فراڈ کیا گیا ہے۔

ڈاکٹر عاصم حسین کو نیب عدالت کے انتظامی جج سعد قریشی کے روبرو منگل کو پیش کیا گیا۔

’دہشت گردی کے الزامات ختم‘، ڈاکٹر عاصم نیب کے حوالے

سابق وزیر ڈاکٹر عاصم چار روزہ ریمانڈ پر پولیس کے حوالے

نیب کے تفتیشی افسر نے عدالت کو بتایا کہ ملزم سے 20 بینکوں، انشورنس کمپنیوں اور مالیاتی ادروں کے کھاتوں کے بارے میں تفتیش کرنی ہے۔

نیب نے دعویٰ کیا ہے کہ دوران تفتیش سٹاک ایکسچینج کا بھی سکینڈل سامنے آیا ہے۔

ملزم نے انکشاف کیا ہے کہ سنہ 2008 اور 2009 میں سٹاک ایکسچینج میں مصنوعی بحران پیدا کر کے جہانگیر صدیقی کمپنی کو 170 ملین ڈالر کا فائدہ پہنچایا گیا۔

نیب افسر نے ملزم سے تفتیش کے لیے ریمانڈ میں اضافے کی گذارش کی جسے عدالت نے منظورکرتے ہوئے ملزم کو 18 جنوری تک نیب کے حوالے کر دیا۔

اس سے پہلے ڈاکٹر عاصم کے وکیل نے مزید ریمانڈ کی مخالفت کرتے ہوئے ان کے موکل کو جیل بھیجنے کی درخواست کی۔

ڈاکٹر عاصم کے وکیل کا موقف تھا کہ ان کے موکل کو پہلے دہشت گردی کے الزام میں گرفتار کیا گیا تھا اور اسی میں جوائنٹ انٹروگیشن کی گئی تھی اب اس تحقیقات کو نیب استعمال کر رہی ہے۔

ڈاکٹر عاصم کے وکیل عامر رضا نقوی اور انور منصور کا کہنا تھا نیب قانون کے مطابق کسی بھی مشتبہ ملزم کو اس صورت میں گرفتار کیا جاسکتا ہے جب ٹھوس مواد موجود ہوں لیکن اس کے برعکس ڈاکٹر عاصم کو پہلے گرفتار کیا گیا ہے اور بعد میں ثبوت تلاش کیا جا رہا ہے۔

وکلا کا کہنا تھا کہ کسی بھی ملزم کو اپنے ہی خلاف گواہی دینے کے لیے مجبور نہیں کیا جاسکتا۔

دوسری جانب عدالت میں ماہر نفسیات ڈاکٹر ہارون احمد کی جانب سے ڈاکٹر عاصم حسین کے نفسیاتی تجزیے کی رپورٹ پیش کی گئی۔

اس رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ مسلسل قید و بند اور تشدد کی وجہ سے ڈاکٹر عاصم حسین ذہنی دباؤ میں ہیں اور ان میں نا امیدی کے احساسات جنم لے رہے ہیں جس کی وجہ سے وہ خود کشی بھی کرسکتے ہیں۔

ڈاکٹر ہارون نے تجویز دی ہے کہ ڈاکٹر عاصم کو اس ماحول سے نکال کر کسی ہپستال میں منتقل کرنے کی ضرورت ہے جہاں ان کی سائیکو تھراپی کی جا سکے۔

اسی بارے میں