شمالی وزیرستان میں بمباری سے ’آٹھ شدت پسند ہلاک‘

تصویر کے کاپی رائٹ PAF
Image caption شوال میں شدت پسندوں کے خلاف فضائی کارروائیاں کافی عرصے سے جاری ہیں

پاکستانی فوج نے وفاق کے زیرِ انتظام قبائلی علاقے شمالی وزیرستان میں پاکستان اور افغانستان کے سرحدی علاقے میں فضائی کارروائیوں میں کم از کم آٹھ شدت پسندوں کی ہلاکت کا دعویٰ کیا ہے۔

فوج کے شعبۂ تعلقاتِ عامہ کے مطابق پاک فضائیہ کے جیٹ طیاروں نے اتوار کو شوال اور دتہ خیل کے علاقوں میں شدت پسندوں کے ٹھکانوں کو نشانہ بنایا۔

’شمالی وزیرستان، خیبر میں کارروائیوں میں 31 شدت پسند ہلاک‘

شوال میں فوج کی فضائی کارروائیوں میں 14 شدت پسند ہلاک

سرکاری ذرائع ابلاغ کے مطابق آئی ایس پی آر کا کہنا ہے کہ ان کارروائیوں میں جہاں آٹھ شدت پسند مارے گئے وہیں ان کے کئی ٹھکانے بھی تباہ کیے گئے ہیں۔

خیال رہے کہ شوال شمالی وزیرستان کا وہ دشوار گزار پہاڑی علاقہ ہے جہاں گذشتہ برس اگست سے پاکستانی فوج شدت پسندوں کے خلاف زمینی کارروائیاں کر رہی ہے جس میں اسے پاکستانی فضائیہ کی مدد بھی حاصل ہے۔

ماضی میں بھی پاکستان کے جنگی طیارے اس علاقے کو نشانہ بناتے رہے ہیں اور ان حملوں میں درجنوں شدت پسندوں کی ہلاکت کے دعوے کیے گئے تھے۔

اس کے علاوہ شوال کا علاقہ امریکی ڈرون طیاروں کے حملوں کا بھی نشانہ بنتا رہا ہے۔

اسی بارے میں