اقبال ظفر جھگڑا خیبر پختونخوا کے انتیسویں گورنر

اقبال ظفر جھگڑا تصویر کے کاپی رائٹ Other
Image caption خیبر پختونخوا کے گورنر کو کئی چیلنجز کا سامنا ہے

پاکستان مسلم لیگ نواز کے رہنما اقبال ظفر جھگڑا نے صوبہ خیبر پختونخوا کے گورنر کا حلف لے لیا ہے۔ وہ صوبے کے انتیسویں گورنر ہیں۔ اقبال ظفر جھگڑا کو فاٹا کی صورتحال کے حوالے سے متعدد چیلنجز کا سامنا ہوگا۔

تقریب حلف وفاداری کی تقریب گورنر ہاؤس پشاور میں منعقد ہوئی۔ چیف جسٹس پشاور ہائی کورٹ جسٹس مظہر عالم میانخیل نے ان سے حلف لیا۔

گورنر ہاؤس میں منعقد اس تقریب میں وزیر اعلی خیبر پختونخوا پرویز خٹک سمیت اہم شخصیات اور مسلم لیگ کے کارکن بڑی تعداد میں موجود تھے۔

اقبال ظفر جھگڑا صوبے کے انتیسویں اور اس صوبے میں مسلم لیگ کے چوتھے گورنر ہیں جبکہ زیادہ وقت فوجی اور سول سروسز کے ریٹائرڈ افسران اس عہدے پر تعینات رہے ہیں۔

سردار مہتاب احمد خان نے نجی وجوہات کی بنیاد پر اس عہدے سے استعفی دے دیا تھا جس کے بعد مختلف شخصیات کا نام اس عہدے کے لیے سامنے آیا تھا لیکن حتمی فیصلہ اقبال ظفر جھگڑا کے حق میں ہوا۔

اقبال ظفر جھگڑا مئی سال انیس سو سینتالیس میں پیدا ہوئے۔ ان کا تعلق پشاور کے مضافاتی گاؤں جھگڑا سے ہے ۔ وہ دو مرتبہ سینٹ کے رکن رہے اور اس دوران وہ سٹینڈنگ کمیٹیز کے چیئرمین بھی تعینات رہے۔

انھوں نے اپنے علاقے سے انتخابات میں بھی حصہ لیا لیکن ناکام رہے ۔ اقبال ظفر جھگڑا مسلم لیگ نواز کے ساتھ عرصہ دراز سے وابستہ ہیں۔ انھوں نے پرویز مشرف کے دور میں جب میاں برادران ملک سے باہر چلے گئے تھے احتجاجی ریلیوں کی قیادت کی تھی۔

اقبال ظفر جھگڑا کو قبائلی علاقوں اور صوبے کے مرکز کے ساتھ تعلقات کے حوالے سے متعدد چینلنجز کا سامنا ہوگا۔

فاٹا میں فوجی آپریشن اور عارضی طور پر بے گھر افراد کی اپنے علاقوں کو واپسی کے حوالے سے سینیئر صحافی ایم ریاض کہتے ہیں کہ یہ گورنر کے لیے ایک بڑا امتحان ہو سکتا ہے۔ انھوں نے کہا قبائلی علاقوں میں شدت پسندوں کے خلاف جاری آپریشن کے بعد ان علاقوں میں امن کا ایسا نظام قائم کرنا ہوگا جس سے آپریشنز کے حقیقی نتائج سامنے آ سکیں۔ اس کے علاوہ نوجوانوں میں پائی جانے والی بے چینی تعلیم اور صحت کے حوالے سے بھی اقدامات کرنا ہوں گے۔

ان کا کہنا تھا کہ مرکز اور صوبے کے درمیان پاک چین اقتصادی راہداری کے حوالے سے گورنر اہم کردار ادا کر سکتے ہیں اور اس سے صوبہ ترقی کرے گا۔

فاٹا اصلاحات اور مستقبل میں فاٹا کی کیا حیثیت ہو سکتی ہے، علیحدہ صوبہ یا خیبر پختونخوا میں شمولیت یا ایک علیحدہ انتظامی حیثیت اس بارے میں بھی اہم فیصلے کرنا ہوں گے۔ اس کے علاوہ قبائلی علاقوں میں امن کا قیام ان کی اہم زمہ داری ہوگی۔

اسی بارے میں