پانچ کرکٹر کا جھگڑا اور ’شیشہ ٹوٹا نہیں دراڑ پڑگئی‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

پاکستانی کرکٹ ٹیم کے اوپننگ بیٹسمین احمد شہزاد نے ان اطلاعات کو غلط قرار دیا ہے کہ انھوں نے پاکستان کپ کے میچ کے دوران غصے میں آکر اپنے بیٹ سے ڈریسنگ روم کا شیشہ توڑ دیا تھا۔

پاکستانی ذرائع ابلاغ کے مطابق یہ واقعہ اُس وقت پیش آیا تھا جب احمد شہزاد بلوچستان کے خلاف میچ میں79 رنز بناکر آؤٹ ہوکر ڈریسنگ روم میں آئے اور غصے میں آکر اپنے بیٹ سے شیشہ توڑ ڈالا۔

احمد شہزاد پاکستان کپ میں یونس خان کی جگہ خیبرپختونخوا کی ٹیم کی قیادت کر رہے ہیں۔

احمد شہزاد نے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے کہا کہ میڈیا میں جس انداز سے یہ واقعہ بیان کیا گیا ہے ایسا کچھ بھی نہیں ہوا۔

حقیقت یہ ہے کہ جب وہ آؤٹ ہوکر ڈریسنگ روم میں واپس آئے تو شیشے کے قریب اپنی سیٹ پر بیٹھتے ہوئے انھوں نے اپنا بیٹ نیچے رکھے ہوئے بیگ میں پھینکا جیسا کہ بیٹسمین عام طور پر کرتے ہیں ۔

’بیٹ لگنے سے شیشہ بالکل نہیں ٹوٹا شاید اس میں دراڑ پڑی تھی جس کا علم انہیں بعد میں خیبرپختونخوا کے کوچ کبیرخان کے ذریعے ہوا۔‘

احمد شہزاد نے کہا کہ وہ جھوٹ نہیں بولتے اور جو کچھ بھی ہوا وہ انھوں نے سچ سچ بیان کردیا ہے۔

دوسری جانب پاکستان کرکٹ بورڈ اس واقعے کے حقائق جاننے کی کوشش کر رہا ہے جس کا تعلق پانچ کرکٹرز کے مبینہ جھگڑے سے ہے۔

اطلاعات کے مطابق پانچ کرکٹرز عمراکمل، بلاول بھٹی، اویس ضیا، محمد نواز اور شاہد یوسف کے بارے میں بتایاگیا ہے کہ وہ فیصل آباد میں کسی تھیٹر میں ڈرامہ دیکھنے گئے تھے جہاں مبینہ طور پر ان کا کسی سے جھگڑا ہوگیا تھا۔

واضح رہے کہ عمراکمل اس سے قبل بھی حیدرآباد میں ضابطہ اخلاق کی خلاف ورزی کے مرتکب ٹھہرے تھے تاہم پاکستان کرکٹ بورڈ نے شواہد نہ ملنے پر انہیں کلیئر کردیا تھا۔

اسی بارے میں