’ آف شور کمپنی بنائی، اس میں کوئی غیرقانونی چیز نہیں ہے‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان نے کہا ہے کہ انھوں نے سنہ 1983 میں ایک آف شور کمپنی بنائی تھی تاہم ان کا کہنا ہے کہ یہ ان کا جائز حق تھا۔

جمعے کو لندن کے ہیتھرو ایئرپورٹ پر میڈیا کے نمائندوں سے گفتگو میں عمران کا کہنا تھا کہ انھوں نے یہ آف شور کمپنی لندن میں فلیٹ خریدنے کے سلسلے میں اکاؤنٹنٹ کے کہنے پر بنائی تھی۔

* ’حکومتی ضوابطِ کار کے تحت کمیشن نہیں بنایا جا سکتا‘

* پاکستان کا موجودہ بحران، کب کیا ہوا؟

خیال رہے کہ اس سے قبل نجی ٹی وی چینل جیو نیوز کے ایک پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے تحریک انصاف کے ترجمان نعیم الحق نے کہا تھا کہ عمران خان نے کرکٹ کھیل کر کمائے ہوئے پیسوں سے ’قانونی آف شور کمپنی‘ بنائی تھی۔

عمران خان کے بیان کے ردعمل میں حکمراں جماعت پاکستان مسلم لیگ ن کی رہنما مریم نواز نے عمران خان کو آف شور کمپنیوں کا ’بانی‘ قرار دیا ہے۔ جبکہ پاکستان میں سوشل میڈیا پر عمران خان کے اسی بیان سے متعلق موضوعات ٹوئٹر پر ٹرینڈ کر رہے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ PTI
Image caption تحریک انصاف کے ترجمان نعیم الحق نے کہا تھا کہ عمران خان نے کرکٹ کھیل کر کمائے ہوئے پیسوں سے ’قانونی‘ لیگل آف شور کمپنی‘ بنائی تھی

لندن کے ہیتھرو ایئرپورٹ پر ایک صحافی کے سوال کہ پاکستان تحریک انصاف کی ترجمان نعیم الحق نے کہا ہے کہ سنہ 1983 میں عمران خان نے آف شور کمپنی کے ذریعے لندن میں فلیٹ خریدا تھا۔

اس کے جواب میں عمران خان کا کہنا تھا کہ ’اس میں کوئی غیرقانونی چیز نہیں ہے۔ وہ سارا پیسہ پاکستان واپس لے کر آیا۔ اور میں نے کبھی اس بات سے انکار نہیں کیا کہ میرا فلیٹ نہیں تھا۔‘

ان کا کہنا تھا کہ ’میں برطانیہ کا شہری نہیں ہوں اور آف شور کمپنی بنانا میرا جائز حق تھا تاکہ مزید ٹیکس سے بچا جا سکے۔‘

عمران خان کا کہنا تھا کہ ’سنہ 2012 میں مجھ سے بنی گالہ میں گھر کے متعلق سوال کیا گیا تو میں نے پریس کانفرنس میں اس فلیٹ کی فروخت کی رسید دکھائی اور اس پیسے سے میں نے پاکستان میں اپنا گھر بنایا۔‘

انھوں نے کہا کہ ’میں ان پاکستانیوں میں سے ہوں جو 19 ارب ڈالر بیرون ملک پیسہ کما پاکستان بھیجتے ہیں۔‘

اس موقع پر انھوں نے ایک بار بھر شریف خاندان کو شدید تنقید کا نشانہ بھی بنایا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Twitter

خیال رہے کہ سپریم کورٹ کے چیف جسٹس نے پاناما لیکس کے معاملے پر تحقیقات کے لیے حکومت کی طرف سے بھجوائے گئے ضوابط کار کے تحت عدالتی کمیشن تشکیل دینے سے معذوری ظاہر کی ہے۔

اس حوالے سے عمران خان کا کہنا تھا کہ حکومت نے اپنا ضوابط کار دیے ہیں جو اپوزیشن کو منظور نہیں ہیں۔ اپوزیشن کے اپنے ضوابط کار ہیں، جب تک حکومت اور اپوزیشن کو ملا کر ضوابط کار نہیں بنیں گے تو سپریم کورٹ کبھی بھی یک طرفہ ضوابط کار قبول نہیں کرے گی۔

’جب تک ٹی او آرز پر حکومت اور اپوزیشن متفق ہیں ہوں گے انھیں سپریم کورٹ قبول نہیں کرے گی۔‘

خیال رہے کہ اپوزیشن کی طرف سے مطالبے کے بعد حکومت چیف جسٹس کی سربراہی میں تحقیقاتی کمیشن بنانے پر تیار تو ہو گئی تھی لیکن اس معاملے پر تحقیقات کے لیے حکومت نے جو ضوابط کار تجویز کیے تھے ان کو حزب اختلاف کی جماعتوں نے یکسر مسترد کر دیا تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption وزیرِ اعظم نواز شریف نے قوم سے خطاب میں اپنے خاندان پر لگے الزامات کی تحقیقات سپریم کورٹ کے ریٹائرڈ جج سے کروانے کا اعلان کیا تھا

گذشتہ ماہ پاناما کی ایک لا فرم موساک فونسیکا سے ملنے والی خفیہ دستاویزات میں وزیر اعظم محمد نواز شریف کے بچوں کی کاروباری کپمنیوں اور جائیداد کا انکشاف ہونے کے بعد سے حکومتِ پاکستان پر حزبِ اختلاف کی جماعتوں کی جانب سے دباؤ ڈالا جا رہا ہے کہ سارے معاملے کی عدالتی تحقیقات کروائی جائیں۔

پامانا لیکس کے منظرِ عام پر آنے کے بعد وزیرِ اعظم نواز شریف نے قوم سے خطاب میں اپنے خاندان پر لگے الزامات کی تحقیقات سپریم کورٹ کے ریٹائرڈ جج سے کروانے کا اعلان کیا تھا۔

لیکن حزبِ اختلاف کی جماعتوں خصوصاً پاکستان تحریکِ انصاف نے مطالبہ کیا تھا کہ معاملے کی تحقیقات کے لیے سپریم کورٹ کے چیف جسٹس کی سربراہی میں کمیشن بنایا جائے جبکہ پاکستان پیپلز پارٹی کا مطالبہ تھا کہ وزیرِ اعظم کے خاندان کے بیرونِ ملک میں موجود کاروبار کا فرانزک آڈٹ کروایا جائے۔

اسی بارے میں