تعلیمی درجہ بندی: بلوچستان آخری، عمران کا پنڈی پہلا

تصویر کے کاپی رائٹ AP

پاکستان میں تعلیم کے حوالے سے تازہ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ صوبہ سندھ میں زیر تعلیم بچوں میں سے نصف اردو، انگریزی اور ریاضی کی بنیاد سے بھی لاعلم ہیں۔

یہ تازہ رپورٹ الف اعلان اور ایس ڈی پی آئی نے جاری کی ہے۔

اس رپورٹ کے مطابق سندھ میں 55 فیصد بچے اردو کی کہانی نہیں پڑھ سکتے، 76 فیصد انگریزی کا ایک جملہ بھی پڑھنے سے قاصر ہیں اور 65 فیصد بچے دو ہندسوں کی تقسیم کی بھی قابلیت نہیں رکھتے۔

صوبہ سندھ میں سکولوں کی کل تعداد 46 ہزار سے زائد ہے، جن میں سے صرف ساڑھے دس ہزار یعنی 22.8 فیصد طالبات کے لیے ہیں۔ ان طلبہ اور طالبات کے لیے ایک لاکھ 44 ہزار اساتذہ موجود ہیں جن میں سے 44500 خواتین ٹیچرز ہیں۔

الف اعلان کی رپورٹ کے مطابق تعلیمی سکور میں گذشتہ سال کی طرح اس سال بھی صوبہ سندھ چھٹے نمبر پر رہا۔ سندھ کے صرف چھ اضلاع درجہ بندی کے پہلے نصف میں جگہ لینے میں کامیاب ہوسکے جبکہ کوئی بھی ضلع 40 درجوں میں شامل نہیں ہوسکا۔

اس رپورٹ میں ترتیب وار اسلام آباد کو پہلا درجہ، آزاد جموں و کشمیر کو دوسرا، پنجاب کو تیسرا، گلگت بلتستان کو چوتھا، خیبر پختونخوا کو پانچواں، صوبہ سندھ کو چھٹا، فاٹا کو ساتواں اور اور بلوچستان کو آٹھواں درجہ دیا گیا ہے۔

رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ صوبہ سندھ میں سکول انفراسٹرکچر سکور پچاس سے بھی کم رہا اور صوبے میں صرف 23 فیصد سکول ایسے ہیں جن میں چاروں بنیادی سہولیات یعنی بجلی، پینے کا پانی، لیٹرین اور چار دیواری دستیاب ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

الف اعلان کے جائزے میں انکشاف کیا گیا ہے کہ سندھ میں سکول میں داخلے کے بعد 50 فیصد بچے سکول چھوڑ جاتے ہیں جن میں نصف لڑکیاں ہیں جبکہ 56 فیصد بچے کبھی سکول ہی نہیں گئے۔

الف اعلان اور ایس ڈی پی آئی کی ضلعی تعلیمی درجہ بندی کے بارے میں یہ چوتھی رپورٹ ہے جو چار سالوں کی درجہ بندیوں کے ساتھ ضلعی موازانہ بھی پیش کرتی ہے۔ اس تازہ درجہ بندی میں ملک کے 151 اضلاع، ایجنسیوں اور فرنٹیئر ریجنز کو شامل کیا گیا ہے۔

اس رپورٹ میں وزیر اعظم، چاروں صوبائی وزرا اعلیٰ اور قائدین حزب اختلاف کے انتخابی حلقوں میں بھی تعلیم صورتحال پر نظر ڈالی گئی ہے۔

سیاستدانوں کے اضلاع اور درجہ بندی
نام ضلع کتنی بار منتخب درجہ
وزیر اعلیٰ ثنا اللہ زہری خضدار تین 109
قائد حزب اختلاف مولانا عبدالواسع قلعہ سیف اللہ چھ 113
وزیر اعلیٰ پرویز خٹک نوشہرہ پانچ 30
قائد حزب اختلاف مولانا لطف الرحمان ڈیرہ اسماعیل خان دو 90
وزیر اعلیٰ شہباز شریف لاہور چھ 22
قائد حزب اختلاف میاں محمود الرشید لاہور تین 22
وزیر اعلیٰ سید قائم علی شاہ خیرپور سات 71
قائد حزب اختلاف خواجہ اظہارالحسن کراچی دو 43
وزیر اعظم نواز شریف لاہور سات 22
قائد حزب اختلاف سید خورشید شاہ سکھر سات 73
مولانا فضل الرحمان ڈیرہ اسماعیل خان پانچ 90
عمران خان راولپنڈی ایک 1
ڈاکٹر فاروق ستار کراچی چھ 43
محمد خان اچکزئی کوئٹہ چار 56

رپورٹ کے مطابق تعلیمی اور سکول انفرا سٹرکچر میں خراب کارکردگی دکھانے کے باعث بلوچستان صوبائی درجہ بندی میں آخری درجے پر پہنچ گیا ہے۔ پنجاب سب سے آگے ہے اس کے 93 فیصد سکولوں میں تمام بنیادی سہولیات موجود ہیں۔

صوبہ سندھ میں 19500 ایسے سکول ہیں جن میں صرف ایک استاد تعینات ہے، پنجاب میں ان سکولوں کی تعداد 5500 کے قریب ہے جبکہ اسلام آباد میں ایک بھی ایسا سکول نہیں جبکہ بلوچستان کے 11 ہزار پرائمری سکولوں میں سے نصف میں ایک ہی استاد تعینات ہے۔

اسی بارے میں