’ملا اختر ایران میں اپنے خاندان سے مل کر آ رہے تھے‘

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption افغان طالبان کے امیر ملا اختر منصور گذشتہ ہفتے بلوچستان میں ہونے والے امریکی ڈرون حملے میں مارے گئے تھے

امریکہ کے ذرائع ابلاغ کی ایک رپورٹ کے مطابق امریکہ نے افغان طالبان کے سربراہ ملا اختر منصور کی گاڑی کی نشاندہی اُس وقت کی جب وہ ایران میں اپنے خاندان سے ملاقات کر کے واپس آ رہے تھے۔

امریکی روزنامے وال سٹریٹ جرنل کے مطابق ملا اختر منصور کو پاکستان آتے ہوئے اُس علاقے میں نشانہ بنایا گیا جہاں عمومی طور پر ڈرون حملے نہیں ہوتے ہیں۔

٭ ہبت اللہ اخوند زادہ افغان طالبان کے نئے امیر مقرر

٭ ملا منصور: اسرار کے سائے

٭ ڈرون حملے پر آرمی چیف کا ’شدید تشویش‘ کا اظہار

ایران نے ان خبروں کو مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ ملا اختر منصور ایران سے پاکستان میں داخل نہیں ہو رہے تھے۔

یاد رہے کہ افغان طالبان کے امیر ملا اختر منصور گذشتہ ہفتے بلوچستان میں ہونے والے امریکی ڈرون حملے میں مارے گئے تھے۔

وال سٹریٹ جرنل میں شائع ہونے والی رپورٹ میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ امریکی ڈرون ایران پاکستان سرحدی علاقے میں کام نہیں کر سکتا تھا۔ اسی لیے انٹیلجینس اطلاعات اور مواصلاتی رابطوں کی جاسوسی کے ذریعے خفیہ اداروں نے ملا منصور کا پتہ لگایا اور سرحدی علاقہ عبور کرنے کے بعد جیسے ہی وہ بلوچستان میں داخل ہوئے انھیں نشانہ بنایا گیا۔

اخبار کے مطابق ملا منصور سفید رنگ کی کرولا گاڑی میں سفر کر رہے تھے۔

حکام نے وال سٹریٹ جرنل کو بتایا کہ مسلح ڈرون طیارے افغانستان سے پرواز کرتے ہوئے آئے اور گاڑی کو اُس وقت نشانہ بنایا جب طالبان کے رہنما کوئٹہ پہنچنے والے تھے۔

تاہم پاکستان کے وزیر داخلہ چوہدری نثار علی خان نے کہا ہے کہ امریکی ڈرون طیارے پاکستان کی سرحد میں داخل نہیں ہوئے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption دفتر خارجہ نے اسلام آباد میں تعینات امریکی سفیر کو طلب کر کے امریکی ڈرون حملے کی سختی سے مذمت کی تھی

وال سٹریٹ جرنل کے مطابق ملا اختر منصور کو بلوچستان میں مارنے کا مقصد پاکستان کو خبردار کرنا ہے کہ امریکہ ضرورت پڑنے پر پاکستان کو بتائے بغیر اُس کی سرزمین پر کارروائی کر سکتا ہے۔

اس ڈرون حملے کے بعد امریکی صدر براک اوباما اور امریکی دفترِ خارجہ کے ترجمان نے کہا تھا کہ امریکہ اُن شدت پسندوں کے خلاف کارروائی جاری رکھے گا جو امریکی افواج کے خلاف براہِ راست حملوں کے منصوبے بندی کرتے ہیں۔

دوسری جانب پاکستان نے اپنی سرزمین پر امریکی ڈرون حملے پر تشویش کا اظہار کیا ہے اور پاکستان کے دفتر خارجہ نے اسلام آباد میں تعینات امریکی سفیر کو طلب کر کے امریکی ڈرون حملے کی سختی سے مذمت کی تھی۔

پاکستان کی فوج کے سربراہ جنرل راحیل شریف نے امریکی سفیر سے ملاقات میں بلوچستان میں امریکی ڈرون حملے پر شدید تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ یہ پاکستان کی خود مختاری کی خلاف ورزی ہے اور اس طرح کے واقعات سے دونوں ملکوں کے تعلقات متاثر ہو سکتے ہیں۔

اسی بارے میں