’ امریکی ڈرون حملوں کی مذمت بہت چھوٹا لفظ ہے‘

تصویر کے کاپی رائٹ APP

پاکستان کی بری فوج کے سربراہ جنرل راحیل شریف نے کہا ہے کہ پاکستان کے پاس شدت پسندی کے خلاف جنگ میں ناکامی کا کوئی آپشن نہیں ہے اور شدت پسندی کے خلاف جنگ میں حاصل کی گئی کامیابیوں کو برقرار رکھنا بہت اہم ہے۔

پارلیمان کے مشترکہ اجلاس سے صدر مملکت کے خطاب کے بعد قومی اسمبلی کے سپیکر کے چیمبر میں بدھ کو میڈیا سے غیر رسمی گفتگو کرتے ہوئے انھوں نے کہا کہ قبائلی علاقوں کو اس بات کی یقین دہانی کروائی گئی ہے کہ آپریشن ضرب عضب کے خاتمے کے بعد شدت پسند اس علاقے کا رخ نہیں کرسکیں گے۔

٭ ڈرون حملے پر آرمی چیف کا ’شدید تشویش‘ کا اظہار

٭ ’شدت پسندی کے خاتمے کے لیے اداروں میں تعاون ضروری‘

جنرل راحیل شریف کا کہنا تھا کہ رواں سال ملک میں شدت پسندی کے خاتمے کا سال ہوگا اور ضرب عضب بھی اس سال مکمل ہوگا۔

انھوں نے کہا کہ ضرب عضب مکمل ہونے کے بعد فاٹا میں ایک نظام وضح کیا جائے تاکہ جو لوگ شدت پسندوں کے خلاف جنگ کی وجہ سے اپنا علاقہ چھوڑ گئے تھے انھیں واپسی پر کوئی مشکلات پیش نہ آئیں۔

بری فوج کے سربراہ نے کہا کہ امریکی ڈرون حملے پاکستان کی سلامتی اور خود مختاری پر حملہ ہے جسے کسی طور پر بھی برداشت نہیں کیا جا سکتا۔

انھوں نے کہا کہ ڈرون حملوں کی مذمت بہت چھوٹا لفظ ہے اور اس معاملے کو تمام متعقلہ فورمز پر بھرپور انداز میں اٹھایا جا رہا ہے۔

راحیل شریف کا کہنا تھا کہ اس طرح کے واقعات سے دونوں ملکوں کے درمیان تعلقات متاثر ہو سکتے ہیں۔

چین پاکستان اقتصادی راہداری کا ذکر کرتے ہوئے اُنھوں نے کہا کہ یہ منصوبہ ہر حال میں مکمل کیا جائے گا۔

صدر مملکت کے پارلیمان کے اجلاس سے خطاب کے بعد آرمی چیف نے سپیکر لاونج میں صدر مملکت اور مختلف سیاسی رہنماوں سے بھی ماقاتیں کیں۔

اسی بارے میں