امجد صابری کے جنازے میں ہزاروں افراد کی شرکت

اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں

پاکستان کے شہر کراچی میں ہدف بنا کر قتل کیے جانے والے معروف قوال امجد صابری کو سپردِ خاک کر دیا گیا ہے اور ان کی نماز جنازہ میں مردوں کے علاوہ خواتین کی بڑی تعداد نے بھی شرکت کی ہے۔

امجد صابری بدھ کی شام کراچی کے مصروف علاقے لیاقت آباد میں موٹر سائیکل پر سوار دو نامعلوم مسلح افراد کی گولیوں کا نشانہ بنے تھے۔

٭ کراچی میں معروف قوال امجد صابری قتل

٭ ’کوئی اپنا نہیں غم کے مارے ہیں ہم‘

٭ ایک صوفی قوال کی موت

٭ امجد صابری کا آخری سفر، تصاویر

امجد صابری کی نماز جنازہ جمعرات کی دوپہر لیاقت آباد میں ہی ادا کی گئی ہے جس میں شرکت کے لیے عوام کی بڑی تعداد مقررہ مقام پر پہنچی۔

نامہ نگار ریاض سہیل کے مطابق نمازِ جنازہ میں روایت کے برعکس خواتین بھی شریک ہوئیں۔ اس موقع پر پورے علاقے میں سیاہ پرچم لگائے گئے تھے۔

Image caption امجد صابری کی نماز جنازہ میں شرکت کے لیے عوام کی بڑی تعداد لیاقت آباد پہنچی

نمازِ جنازہ کے بعد امجد صابری کو پاپوش نگر کے قبرستان میں ان کے والد مشہور قوال غلام فرید صابری کے پہلو میں سپردِ خاک کر دیا گیا۔

مقتول امجد صابری کے بھائی آخری رسومات میں شرکت کے لیے لندن سے کراچی پہنچے ہیں۔

کراچی آمد کے بعد میڈیا سے بات کرتے ہوئے ثروت صابری کا کہنا تھا کہ اگر حکومت خود کو حکومت کہتی ہے تو اسے اپنے اقدامات سے ثابت کرنا چاہیے کہ کراچی میں اس کا اثر ہے۔

ثروت صابری نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ وہ پورے ملک کے حالات ٹھیک کرے۔

’میرے بھائی کے قاتلوں کو پکڑ لیں گے، پشاور سکول کے حملہ آوروں کو پکڑ لیں گے، چیف جسٹس کے بیٹے کو اغوا کرنے والے بھی پکڑ لیے جائیں گے لیکن جو عام آدمی مر رہے ہیں ان کی داد رسی کون کرے گا۔ حکومت بادشاہ سے لے کر فقیر تک سب کی ذمہ دار ہے وہ ہر کسی کی حفاظت اس کی یقینی بنائے۔‘

ان کا کہنا تھا کہ امجد صابری پر حملہ کرنے والے درندوں سے بھی زیادہ گئے گزرے ہیں اور اس وقت جنرل راحیل شریف پر بہت بڑی ذمہ داری ہے، وہ ان سے گذارش کرتے ہیں کہ وہ فوری ایکشن لیں۔

Image caption امجد صابری کی نمازِ جنازہ میں روایت کے برعکس خواتین بھی شریک ہوئیں

امجد صابری کی ہلاکت کی ملک میں ہر سطح پر مذمت کرتے ہوئے انھیں خراج عقیدت پیش کیا جا رہا ہے اور لیاقت آباد میں مقتول قوال کی رہائش گاہ کے باہر ان کے چاہنے والوں کی ایک بڑی تعداد موجود ہے۔

امجد صابری کا شمار پاکستان مایہ ناز قوالوں میں ہوتا تھا۔ وہ مشہور قوال غلام فرید صابری کے بیٹے تھے اور ان دنوں ایک نجی چینل کی رمضان نشریات سے وابستہ تھے۔

پولیس نے امجد صابری کی ہلاکت کو ٹارگٹ کلنگ قرار دیا ہے۔

ایس ایس پی انویسٹی گیشن عارب مہر نے بی بی سی اردو کے ریاض سہیل کو بتایا تھا کہ حملہ آوروں کا نشانہ امجد صابری ہی تھے اور انھوں نے صرف ڈرائیونگ سیٹ پر بیٹھے شخص کو ہی نشانہ بنایا۔

Image caption لوگوں کی بڑی تعداد امجد صابری کے آبائی علاقے میں جمع ہے

پولیس نے عینی شاہدین کے بیانات کی روشنی میں دو حملہ آوروں میں سے ایک کا نامکمل خاکہ جاری کیا ہے جس کے بارے میں کہا گیا ہے کہ ’یہ 70 فیصد مشتبہ ملزم جیسا ہے۔‘

خاکے کے مطابق حملہ آور کی عمر 25 سے 30 سال کے درمیان ہے جس نے سر پر ٹوپی پہن رکھی تھی۔ یاد رہے کہ حملہ آوروں میں سے جو بائیک چلا رہا تھا صرف اس کا چہرہ ڈھکا ہوا نہیں تھا۔

کراچی پولیس کے سربراہ مشتاق مہر نے امجد صابری کے قتل کے بعد ایس ایچ او شریف آباد فاروق سنجرانی کو معطل کرتے ہوئے ایس ایس پی وسطی سے رپورٹ طلب کر لی ہے۔

اسی بارے میں