کشمیریوں کی ہلاکتیں ماورائے عدالت قتل ہیں: پاکستان

پاکستان نے انڈیا کے زیرانتظام کشمیر میں علیحدگی پسند رہنما برہان وانی سمیت دیگر کشمیروں کی ہلاکت کو ماورائے عدالت قتل قرار دیتے ہوئے اس کی سختی سے مذمت کی ہے۔

انڈیا کے زیر انتظام کشمیر میں برہانی وانی کی ہلاکت کے بعد سے سرکاری فورسز کے خلاف احتجاجی مظاہرے جاری ہیں اور ان مظاہروں میں اب 16 افراد ہلاک اور دو سو کے قریب زخمی ہو گئے ہیں۔

٭ کشمیر میں کشیدگی برقرار، اضافی اہلکاروں کی تعیناتی

پاکستان کے دفترِ خارجہ کے ترجمان نفیس ذکریا کا کہنا ہے کہ ’جموں و کشمیر کے عوام پر مظالم انسانی حقوق کی ِخلاف ورزی ہے اور یہ مظالم جموں و کشمیر کی عوام کو اُن کے حق خوداردایت کے مطالبے سے نہیں روک سکتے۔‘

ترجمان نے کہا کہ پاکستان کو جموں و کشمیر میں حریت رہنماؤں کی گرفتاری پر شدید تشویش ہے۔

پاکستان نے انڈین حکومت پر زور دیا کہ وہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی قرارداروں کے مطابق انسانی حقوق کی پاسداری کرے اور اپنے وعدے پورے کرے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption کشمیر میں دوسرے روز بھی کرفیو جاری ہے

پاکستان کے دفترِ خارجہ کا کہنا ہے کہ جموں و کشیمر کے تنازعے کا حل صرف اُسی صورت میں ممکن ہے اقوام متحدہ کی قرارداد کی روشنی میں منصفانہ اور غیر جانبدارانہ استصواب رائے کے ذریعے کشمیریوں کو ان کا حق خود ارادیت دیا جائے۔

انڈیا کے سر انتظام کشمیر میں علیحدگی پسند رہنما برہان وانی کی ہلاکت کے بعد کشیدگی برقرار ہے اور کئی علاقوں میں کرفیو نافذ ہے۔

اتوار کو بھی جنوبی کشمیر کے چاروں اضلاع اننت ناگ ، کولگام، شوپیان اور پلوامہ میں لوگوں نے کرفیو کی خلاف ورزی کی کوشش کی تاہم فورسز نے ان کا تعاقب کرکے انھیں منتشر کیا۔

اسی بارے میں