’کشمیر میں انڈیا کی پالیسیاں امن کی راہ میں رکاوٹ‘

تصویر کے کاپی رائٹ bbc

پاکستان نے کہا ہے کہ انڈیا کے زیر انتظام کشمیر میں انڈیا کی حکومتی پالیسیاں امن کی راہ میں سب سے بڑی رکاوٹ ہیں۔

دفتر خارجہ کے ترجمان نفیس ذکریا نے جمعرات کو ہفتہ وار بریفنگ کے دوران کہا کہ انڈیا کے زیر انتظام کشمیری میں انڈیا کی افواج ایمبولینس اور ہسپتالوں میں زیرِ علاج مریضوں پر بھی حملے کر رہی ہیں جو کہ ایک غیر انسانی فعل ہے۔

٭ اقوامِ متحدہ میں پاکستانی احتجاج پر انڈیا کا شدید ردعمل

٭ ’دنیا کشمیریوں کی خواہش کا احترام کرے‘

اُنھوں نے کہا کہ انڈیا کا ٹریک ریکارڈ ہے کہ وہ انڈیا کے زیر انتظام کشمیر میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کا مرتکب رہا ہے۔

نفیس ذکریا نے کہا کہ پاکستان نے انڈیا کے زیر انتظام کشمیر میں نہتے کشمریوں میں انڈین افواج کے مظالم سے متعلق اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے پانچ مستقل اراکین سمیت یورپی یونین کے ممالک کو بھی آگاہ کیا ہے۔

اُنھوں نے کہا کہ مسئلہ کشمیر اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے چارٹر پر موجود ہے اور اس مسئلے کو حل کروانا اقوام متحدہ اور عالمی برادری کی ذمہ داری ہے۔

Image caption نفیس ذکریا نے کہا کہ انڈیا کے زیر انتظام کشمیری میں انڈیا کی افواج ایمبولینس اور ہسپتالوں میں زیرِ علاج مریضوں پر بھی حملے کر رہی ہیں

نفیس ذکریا کا کہنا تھا کہ کشمیر کے مسئلے پر پاکستان اور انڈیا کے درمیان دو جنگیں ہو چکی ہیں لیکن جنگیں مسائل کا حل نہیں اور تمام مسائل کا واحد حل مذاکرات ہی ہیں۔

اُن کا کہنا تھا کہ پاکستان نے مذاکرات سے کبھی بھی راہ فرار اختیار نہیں کی جبکہ انڈیا مذاکرات نہ کرنے کے لیے مختلف بہانوں سے کام لے رہا ہے۔

دفتر خارجہ کے ترجمان کا کہنا ہے کہ پاکستان نے مسئلہ کشمیر کو اقوام متحدہ کے علاوہ اسلامی ممالک کی تنظیم اور دیگر فورم پر موثر طریقے سے اُٹھایا ہے۔

دوسری جانب اسلامی ممالک کی تنظیم کے انسانی حقوق سے متعلق ادارے نے انڈیا کے زیر انتظام کشمیر میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کی سخت مذمت کرتے ہوئے عالمی برادری سے ماورائے عدالت قتل ہونے والے افراد کے اس واقعے کا نوٹس لینے کا مطالبہ کیا ہے۔

Image caption نفیس ذکریا کا کہنا ہے کہ انڈیا کشمیر میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کا مرتکب رہا ہے

ادارے کی طرف سے جاری ہونے والے بیان میں کہا گیا ہے کہ انڈیا کی افواج کی طرف سے علاقے کے مکینوں کو بنیادی انسانی حقوق بھی فراہم نہیں کیے جا رہے۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ پرامن مظاہرین پر انڈین افواج کی طرف سے کی جانے والی فائرنگ ایک قابل مذمت فعل ہے۔

اُدھر حزب مخالف کی سب سے بڑی جماعت پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے میر وعظ عمر فاروق سے ٹیلی فون پر بات کی ہے اور اُن سے انڈین افواج کے ہاتھوں کشمریوں کی ہلاکت پر سخت افسوس کا اظہار کیا ہے۔

بلاول بھٹو نے کشمیری عوام کے ساتھ مکمل یکجہتی کا اظہار کیا۔

اسی بارے میں