سندھ کے وزیراعلیٰ کی تبدیلی، کابینہ میں ردوبدل کا فیصلہ

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

پاکستان پیپلز پارٹی نے اعلان کیا ہے کہ صوبہ سندھ کے وزیر اعلیٰ کو تبدیل کیے جانے اور سندھ کابینہ میں ردو بدل کا فیصلہ کیا گیا ہے۔

سندھ کے وزیراعلیٰ قائم علی شاہ پیر کی دوپہر کو دبئی سے واپس کراچی پہنچ گئے ہیں۔

پاکستان پیپلز پارٹی کے ترجمان فرحت اللہ بابر نے بی بی سی اردو سے بات کرتے ہوئے کہا کہ وزیراعلیٰ سندھ کو تبدیل کرنے کا فیصلہ دبئی میں پی پی پی کے ہونے والے اجلاس میں کیا گیا ہے۔

انھوں نے بتایا کہ سندھ کے نئے وزیراعلیٰ کا اعلان پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو منگل کو پاکستان پہنچنے پر کریں گے۔

’چیئرمین بلاول بھٹو پرسوں یعنی منگل کو دبئی میں اجلاس میں شرکت کے بعد پاکستان پہنچ رہے ہیں اور وہ پارٹی کے سینیئر رہنماؤں کے ساتھ مشاورت کے بعد نئے وزیر اعلیٰ کا اعلان کریں گے۔‘

سندھ کے نئے وزیراعلیٰ کے لیے مضبوط امیدواروں کے بارے جب ان سے پوچھا گیا تو ان کا کہنا تھا کہ ’اس کا فیصلہ بلاول بھٹو ہی کریں گے۔‘

فرحت اللہ بابر سے جب پوچھا گیا کہ کیا دبئی میں پارٹی کی سینیئر قیادت کے اجلاس میں کراچی میں تعینات نیم فوجی دستے رینجرز کو دی جانے والی اختیارات کے بارے میں کوئی فیصلہ ہوا تو ان کا کہنا تھا ’میرے خیال میں یہ فیصلہ نئی کابینہ ہی کرے گی۔‘

دبئی میں ہونے والے پارٹی کے اس اجلاس میں سندھ کے موجودہ وزیراعلیٰ قائم علی شاہ بھی موجود تھے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption دبئی میں ہونے والے پارٹی کے اس اجلاس میں سندھ کے موجودہ وزیر اعلیٰ قائم علی شاہ بھی موجود تھے

پیپلز پارٹی کی جانب سے سندھ کے وزیراعلیٰ کو تبدیل کرنے کی خبر جیسے ہی ذرائع ابلاغ پر آئی تو سماجی رابطوں کی ویب سائٹوں پر بھی یہی خبر ٹرینڈ کرنے لگی۔

اس وقت پاکستان میں ٹوئٹر پر ہیش ٹیگ قائم علی شاہ ٹرینڈ کر رہا ہے۔

یاد رہے کہ چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے گذشتہ دنوں تمام صوبوں کی پارٹی تنظیموں کو توڑ دیا تھا اور پارٹی کی تنظیِم نو کے لیے رابطہ کمیٹیاں تشکیل دے دی گئی تھیں۔

دوسری جانب حکومت سندھ اور رینجرز میں ایک بار پھر اختیارات میں توسیع کا معاملہ کشیدگی کا باعث بنا ہوا ہے۔

رینجرز کو پولیس اختیارات اور صوبے میں موجودگی کی مدت کی معیاد پوری ہو چکی ہے، تاہم ان کی خواہش ہے کہ انھیں پورے صوبے میں کارروائی کے اختیارات دیے جائیں جبکہ صوبائی حکومت نے ان اختیارات کو کراچی تک محدود رکھا ہے۔

اسی بارے میں