بلوچستان میں فائرنگ اور دھماکہ، ایک ایف سی اہکار ہلاک

Image caption کوئٹہ شہر میں پانچ روز کے دوران یہ دوسرا بم دھماکہ تھا

پاکستان کے صوبہ بلوچستان کے دارالحکومت کوئٹہ سمیت دو علاقوں میں بم دھماکے اور فائرنگ کے واقعات میں لیویز فورس کا ایک اہلکار ہلاک اور ایف سی کے چار اہلکاروں سمیت چھ افراد زخمی ہو گئے ہیں۔

لیویز فورس کے اہلکار کی ہلاکت کا واقعہ کراچی سے متصل بلوچستان کے علاقےحب میں پیش آیا۔

٭ ضلع کیچ میں حملے میں جے یو آئی کے رہنما بیٹے سمیت ہلاک

٭آوران میں فائرنگ میں چار ہلاک

حب میں پولیس کے ایک اہلکار نے بتایا کہ لیویز فورس کے اہلکار بشیر احمد بزنجو پر نامعلوم مسلح افراد نے حملہ کیا جس کے نتیجے میں وہ ہلاک ہوئے۔ ’مارا جانے والا لیویز فورس کا اہلکاررسالدار تھا اور ان کا تعلق ضلع آواران سے تھا۔‘

وہ ضلع آواران کے ڈسٹرکٹ کونسل کے چیئرمین نصیراحمد بزنجو کے بھائی اور بلوچستان اسمبلی کے سابق اسپیکر اور موجودہ رکن اسمبلی میر عبد القدوس بزنجو کے قریبی رشتہ دار تھے۔ ان کو ہلاک کرنے کے محرکات تاحال معلوم نہیں ہوسکے۔

بم دھماکے کا واقعہ کوئٹہ شہر میں بے نظیر پل کے قریب سریاب روڈ پر پیش آیا۔

Image caption دھماکہ خیز مواد اس وقت پھٹ گیا جب فرنٹیئر کور کی گاڑیاں وہاں سے گزر رہی تھیں

وزیر داخلہ میر سرفراز بگٹی نے جائے وقوعہ پر میڈیا کے نمائندوں کو بتایا کہ نامعلوم افراد نے سڑک کنارے دھماکہ خیز مواد نصب کیا تھا۔

دھماکہ خیز مواد اس وقت پھٹ گیا جب فرنٹیئر کور کی گاڑیاں وہاں سے گزر رہی تھیں۔

دھماکے کے باعث ایف سی کے چار اہلکاروں سمیت چھ افراد زخمی ہوئے۔

وزیر داخلہ نے بتایا کہ ایف سی اہلکاروں میں سے ایک کی حالت تشویشناک ہے۔

کوئٹہ شہر میں پانچ روز کے دوران یہ دوسرا بم دھماکہ تھا۔ اس سے قبل سریاب مل کے علاقے میں ہونے والے دھماکے میں ایک شخص ہلاک اور نو زخمی ہوئے تھے۔

بلوچستان میں حالات کی خرابی کے بعد سے بدامنی کے دیگر واقعات کے ساتھ کوئٹہ شہر میں بم دھماکوں کا بھی سلسلہ جاری ہے تاہم سرکاری حکام کا کہنا ہے کہ پہلے کے مقابلے میں ان میں کمی آئی ہے۔

اسی بارے میں