گاڑی سیلابی ریلے میں بہہ جانے سےبچوں سمیت 26 ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption حادثے کا شکار ہونے والی گاڑی

پاکستان کے قبائلی علاقے خیبر ایجنسی میں باراتیوں کی ایک گاڑی سیلابی ریلے میں بہہ جانے سے خواتین اور بچوں سمیت 26 افراد ہلاک ہوگئے ہیں جبکہ تین افراد زخمی ہیں۔

ہلاک ہونے والوں میں 18 بچے، چھ خواتین اور دو مرد شامل ہیں جبکہ اس پک اپ گاڑی میں 28 سے 30 افراد سوار تھے۔

٭ خیبر پختونحوا میں شدید بارشیں، چار افراد ہلاک

٭خیبر پختونخوا میں بارشوں سے ہلاکتوں کی تعداد 96 ہوگئی

لنڈی کوتل کے اسسٹنٹ پولیٹکل ایجنٹ رحیم اللہ محسود نے بی بی سی کو بتایا کہ بارات صبح سویرے دلہن کو لے کر آ رہی تھی کہ راستے میں سیلابی ریلے کی نظر ہوگئی۔

ان کا کہنا تھا کہ اس مقام پر ندیاں آپس میں ملتی ہیں،گاڑی نے ایک ندی کو تو عبور کر لیا تھا لیکن دوسری میں پھنس گئی اور اتنے میں سیلابی ریلہ آیا اور گاڑی کو بہا کر دور لے گیا۔

انھوں نے بتایا کہ لاشیں مختلف مقامات پر بکھری پڑی تھیں جنھیں ایک، ایک کر تلاش کیا گیا اور پھر ورثا کے حوالے کر دیا گیا۔

رحیم اللہ محسود کے مطابق ان میں 14 میتیں ایک ہی گاؤں سے تھیں جہاں ان کی نماز جنازہ ادا کردی گئی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption پک اپ گاڑی میں باراتی بیٹھے تھے جن میں زیادہ تعداد خواتین اور بچوں کی تھی

تین زخمیوں کی حالت انتہائی تشویشناک ہیں جنھیں مقامی ہسپتال منتقل کیا گیا ہے۔

یہ واقعہ لنڈی کوتل کے پسماندہ علاقے زخہ خیل میں پیش آیا۔

اہلکاروں نے بتایا کہ بالائی علاقوں میں شدید بارشوں کے بعد اچانک سیلابی ریلہ آیا جس میں ایک بس بہہ گئی۔

ان کے مطابق پک اپ گاڑی میں باراتی بیٹھے تھے جن میں زیادہ تعداد خواتین اور بچوں کی تھی۔

انتظامی اہلکاروں نے بتایا کہ اعلی حکام اور دیگر عملہ موقع پر پہنچ چکا ہے جہاں امدادی کارروائیاں جاری ہیں۔

پاکستان کے قبائلی علاقوں اور خیبر پختونخوا کے بعض مقامات پر گذشتہ ایک ہفتے سے وقفے وقفے سے شدید بارشیں ہوئی تھیں جن میں مکانات کے منہدم ہونے اور سیلابی ریلوں میں کم سے کم بچوں اور خواتین سمیت پانچ افراد ہلاک ہو گئے تھے۔

یہ واقعات ایبٹ آباد اور دیر کے علاقوں میں پیش آئے تھے۔

اسی بارے میں