قندیل بلوچ کے قتل کا مقدمہ، مفتی عبدالقوی نامزد

Image caption قندیل بلوچ کے قتل سے پہلے مفتی عبدالقوی کی مقتولہ کے ساتھ سوشل میڈیا پر تصاویر شائع ہوئیں تھیں

پنجاب پولیس نے سوشل میڈیا سے شہرت حاصل کرنے والی ماڈل قندیل بلوچ کے قتل کے مقدمے میں مقامی مذہبی رہنما مفتی عبدالقوی کو نامزد کردیا ہے تاہم اُن کی گرفتاری عمل میں نہیں لائی گئی۔

اس مقدمے کی تفتیشی ٹیم میں شامل ایک اہلکار نے بی بی سی کو بتایا کہ مفتی عبدالقوی کو مقتولہ کے والد محمد عظیم کی طرف سے اس ضمن میں پولیس کو دی جانے والی متفرق درخواست کی بنا پر شامل کیا گیا ہے۔

اہلکار کے مطابق مفتی عبدالقوی کو اس مقدمے میں نامزد کرنے سے متعلق مقامی عدالت سے حکم نامہ بھی حاصل کیا گیا تھا۔

اہلکار کے مطابق اس کے علاوہ اس مقدمے میں گرفتار ہونے والے ٹیکسی ڈرائیور عبدالباسط سے ہونے والی تفتیش کی روشنی میں بھی مفتی عبدالقوی کا نام اس مقدمے میں شامل کیا گیا ہے۔

مقامی پولیس کے مطابق عبدالقوی کو ضابطہ فوجداری کی دفعہ 109 کے تحت اس مقدمے میں نامزد کیا گیا جو اعانت مجرمانہ سے متعلق ہے۔

عبدالباسط نےملزمان وسیم اور حق نواز کو قندیل بلوچ کو قتل کرنے کے بعد اُنھیں فرار کروانے میں معاونت فراہم کی تھی۔

واضح رہے کہ قندیل بلوچ کے قتل کی تحقیقات کرنے والی ٹیم نے مفتی عبدالقوی کو تفتیش کے حوالے سے ایک سوالنامہ بھجوایا تھا جس کا اُنھوں نے جواب دیا تھا جس میں ملزم نے دعویٰ کیا کہ اُنھیں معلوم نہیں ہےکہ قندیل بلوچ کو کس نے قتل کیا اور اس میں کتنے افراد ملوث تھے۔

اس کے علاوہ مفتی عبدالقوی نے یہ بھی دعویٰ تھا کہ قندیل بلوچ کے قتل کے بعد مقتولہ کے خاندان کے کسی بھی شخص نے اُن سے رابطہ نہیں کیا تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ qandeelbaloch
Image caption سوشل میڈیا سے شہرت حاصل کرنے والی ماڈل قندیل بلوچ کو اُن کے بھائی نے گلہ دبا کر ہلاک کر دیا تھا

پولیس کو دیے جانے والے بیان کے مطابق ملزم مفتی عبدالقوی پاکستان مدرسہ ایجوکیشن بورڈ کے رکن کے علاوہ فقہ سے متعلق وفاقی شرعی عدالت کے مشیر بھی ہیں۔

قندیل بلوچ کے قتل سے پہلے مفتی عبدالقوی کی مقتولہ کے ساتھ سوشل میڈیا پر تصاویر شائع ہوئیں تھیں جس کے بعد اُن کی رویت ہلال کمیٹی کی رکنیت معطل کردی گئی تھی۔

مفتی عبدالقوی حزب مخالف کی جماعت پاکستان تحریک انصاف کے علما ونگ کے اہم عہدے پر فائض تھے اور اس واقعہ کے بعد اس جماعت کی قیادت نے ملزم سے لاتعلقی کا اظہار کیا تھا۔

مفتی عبدالقوی کا موقف جاننے کے لیے متعدد بار رابطہ کیا گیا لیکن وہ دستیاب نہیں تھے۔

اس سے پہلے پولیس نے مقتولہ قندیل بلوچ کے بھائی اسلم شاہین کو بھی اس مقدمے میں اعانت مجرمانہ کے جرم میں نامزد کیا ہے۔ ملزم اسلم شاہین فوج میں تعینات ہیں اور وہ ابھی تک اس مقدمے کی تفتیش کرنے والی ٹیم کے سامنے پیش نہیں ہوئے۔

اسی بارے میں