’انڈیا، پاکستان انسدادِ دہشت گردی سے متعلق مذاکرات کریں‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

امریکہ کے محکمۂ خارجہ کا کہنا ہے کہ انڈیا اور پاکستان وسیع تعاون اور انسداد دہشت گردی سے متعلق مذاکرات کریں۔

منگل کو واشنگٹن میں پریس بریفنگ کے دوران محکمۂ خارجہ کے نائب ترجمان مارک ٹونر نے کہا کہ پاکستان اور انڈیا کے درمیان بہتر تعلقات دونوں ملکوں اور خطے کے مفاد میں ہیں۔

٭ کشمیر کی بساط پر بلوچستان کی شاہی چال

٭ انڈیا کو کشمیر پر مذاکرات کی باضابطہ دعوت

مارک ٹونر کا کہنا تھا کہ’ہم انڈیا اور پاکستان کے درمیان وسیع پیمانے پر مذاکرات اور انسداد دہشت گردی کے لیے تعاون کی حوصلہ افزائی کرتے ہیں۔‘

انھوں نے کہا کہ یہ انتہائی اہم ہے کہ پاکستان نہ صرف اندرون ملک میں بلکہ خطے میں کہیں بھی دہشت گردوں کی کارروائیوں کو روکے۔

پاکستان اور انڈیا کے درمیان تعطل کے شکار مذاکرات کے حوالے سے ان کا کہنا تھا کہ وسیع تر تعاون اور وسیع تر مذاکرات نہایت اہمیت کے حامل ہیں اور امریکہ اس حوالے سے کی جانے والی کوششوں کی حوصلہ افزائی کرتا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption پاکستان اور انڈیا کے سیکریٹری خارجہ نے اپریل میں نئی دہلی میں بھی ملاقات کی تھی

دوسری جانب پاکستان کے سرکاری ریڈیو کے مطابق وزیر اعظم نواز شریف کے مشیر برائے خارجہ اُمور سرتاج عزیز نے ایک انٹرویو میں کہا ہے کہ ’پاکستان انڈیا کے زیر انتظام کشمیر کے مسلے کو مذاکرات کے ذریعے حل کرنے کے لیے تیار ہے لیکن انڈیا اس اہم مسلے کو نظر انداز کر کے اپنی ذمہ داری سے پیھچے ہٹ رہا ہے۔‘

واضح رہے کہ حالیہ چند دنوں میں پاکستان اور انڈیا کے درمیان کشیدگی میں اضافہ دیکھا گیا ہے۔

پیر کے روز انڈیا کے یوم آزادی کے موقع پر کی جانے والی اپنی تقریر میں وزیراعظم نریندر مودی نے کہا تھا کہ پاکستان کے صوبہ بلوچستان اور پاکستان کے زیرِ انتظام کشمیر اور گلگت کے عوام نے آواز اٹھانے پر ان کا شکریہ ادا کیا ہے۔

جس کے جواب میں پاکستان نے کہا تھا کہ وزیرِ اعظم نریندر مودی کی جانب سے پاکستانی صوبے بلوچستان کے بارے میں بیان یہ ثابت کرتا ہے کہ انڈیا بلوچستان میں دہشت گردی کو ہوا دے رہا ہے۔

تاہم اس سے قبل پاکستان نے انڈین سیکریٹری خارجہ کو جموں و کشمیر کے مسئلے پر باقاعدہ بات چیت کے لیے پاکستان آنے کی دعوت دی تھی۔

دفترِ خارجہ کی جانب سے جاری ہونے والے بیان میں کہا گیا تھا کہ انڈین سیکریٹری خارجہ کے نام تحریرہ کردہ خط میں پاکستانی سیکریٹری خارجہ نے اپنے انڈین ہم منصب کو جموں و کشمیر کے تنازع پر مذاکرات کے لیے پاکستان آنے کی دعوت دی ہے۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ پاکستان اور انڈیا کے تعلقات میں خرابی کی بنیادی وجہ کشمیر کا مسئلہ ہی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption وزیراعظم نریندر مودینے کہا تھا کہ پاکستان کے صوبہ بلوچستان اور پاکستان کے زیرِ انتظام کشمیر اور گلگت کے عوام نے آواز اٹھانے پر ان کا شکریہ ادا کیا ہے

دفترِ خارجہ کا کہنا ہے کہ خط میں یہ کہا گیا تھا کہ پاکستان اور انڈیا دونوں پر یہ عالمی ذمہ داری عائد ہوتی ہے کہ وہ جموں و کشمیر کا تنازعہ اقوامِ متحدہ کی سلامتی کونسل کی قراردادوں کے مطابق حل کریں۔

پاکستان کی جانب سے سامنے آنے والے بیان میں ان شرائط کے بارے میں کچھ نہیں کہا گیا جن کا اعلان انڈین وزارتِ خارجہ کے ترجمان وکاس سواروپ نے سنیچر کو کیا تھا۔

وکاس سواروپ نے ٹوئٹر پر اپنے پیغام میں کہا تھا کہ انڈیا پاکستان کے ساتھ تمام حل طلب مسائل پر بات کرنا چاہتا ہے اور اُسے مذاکرات کی دعوت دی گئی تو وہ اس کا خیر مقدم کرے گا۔

تاہم انھوں نے اس سلسلے میں چند شرائط بھی رکھی تھیں اور کہا تھا کہ مذاکرات شروع کرنے سے پہلے ضروری ہے کہ پاکستان ’سرحد کے پار سے ہونے والی اشتعال انگیزی اور دہشت گردی کو روکے، حافظ سعید اور سید صلاح الدین جیسے بین الااقوامی طور پر تسلیم شدہ دہشت گردوں کی حمایت کرنا بند کرے اور ممبئی اور پٹھان کوٹ حملوں کی تحقیقات کرے۔‘

اسی بارے میں