BBCUrdu.com
  •    تکنيکي مدد
 
پاکستان
انڈیا
آس پاس
کھیل
نیٹ سائنس
فن فنکار
ویڈیو، تصاویر
آپ کی آواز
قلم اور کالم
منظرنامہ
ریڈیو
پروگرام
فریکوئنسی
ہمارے پارٹنر
آر ایس ایس کیا ہے
آر ایس ایس کیا ہے
ہندی
فارسی
پشتو
عربی
بنگالی
انگریزی ۔ جنوبی ایشیا
دیگر زبانیں
 
وقتِ اشاعت:
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے پرِنٹ کریں
پارا چنار:’ہم بھوکے مر جائیں گے‘
 

 
 
زخمیوں کو علاج کے لیے پشاور لایا گیا
پاکستان کے قبائلی علاقے کرم ایجنسی میں گزشتہ جمعہ سے جاری فسادات اور اس کے بعد کرفیو کے نفاذ سے عام لوگوں کی زندگی مشکلات کا شکار ہوگئی اور یوں لگتا ہے کہ عوام متحارب فرقہ ورانہ گروہوں، تشدد اور کرفیو کے یرغمال بن گئے ہیں۔
زمین پر راکٹ اور میزائل فائر ہو رہے ہیں تو فضا میں کوبرا فوجی ہیلی کاپٹر گشت کر رہے ہیں۔خوراک سے لے کر ادویات تک ہر شے کی قلت بتائی جا رہی ہے۔

پارا چنار سے تعلق رکھنے والی خیر بی بی نے روتے ہوئے بتایا: ’میرا گھر اجڑ گیا ہے۔گھر میں پکانے کے لیے کچھ بھی نہیں۔ میرا گھر والا جمعے کے دن آٹا لینے کے لیے نکلا اور پھر واپس نہیں آیا ۔میرا بچہ زخمی ہو گیا تھا، جب اس کو ہسپتال لے جانے کے لیے گھر سے نکلی تو فوج نے مجھ پر فائرنگ کر دی جس سے میری دونوں ٹانگیں زخمی ہو گئی ہیں۔ دو دن سے ہم نے کچھ نہیں پکایا۔‘

کھانے پینے اور علاج معالجے کی سہولیات کے نہ ہونے کی شکایات کے ساتھ یومیہ روزگار پر انحصار کرنے والے بھی روزگار نہ ملنے کی وجہ سے مسائل کا شکار ہیں۔

راشن ختم
 گیس نہیں ہے کہ کھانا پکایا جا سکے ۔آٹا اور گھی بھی اب ختم ہو رہا ہے۔ جن رشتہ داروں کے گھر فسادات میں جل چکے ہیں وہ بھی اب ہمارے گھر میں رہ رہے ہیں جس کی وجہ سے راشن وقت سے پہلے ختم ہو رہا ہے
 
ایک خاتون

مسرت حسین ایک ریڑھی بان ہیں۔ انہوں نے فسادات اور کرفیو کی وجہ سے کاروبار بند ہونے کی شکایت کرتے ہوئے بتایا: ’ فسادات شروع ہونے کے بعد ریڑھا کہاں چلا سکتا ہوں۔ کرفیو لگا ہوا ہے اور میں گھر میں بند پڑا ہوں۔ کھانے پینے کے لیے کچھ نہیں ہے اور بجلی بھی بند ہے۔ دن بھر ریڑھا چلا کر جو کماتا تھا وہی کھاتے تھے۔ اب توگھر میں پڑے زخمیوں کو بھی ہسپتال لے جانے کا نہیں سوچ سکتے۔ سب بند پڑے ہیں۔ ہم بھوکے مر جائیں گے۔‘

کرفیو کے باعث مقامی آبادی کے لیئے بازار جا کر کچھ خریدنا نہات مشکل ہو گیا ہے۔ اس سلسلے میں پارہ چنار کی ایک خاتون نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا: ’گیس نہیں ہے کہ کھانا پکایا جا سکے ۔آٹا اور گھی بھی اب ختم ہو رہا ہے۔ جن رشتہ داروں کے گھر فسادات میں جل چکے ہیں وہ بھی اب ہمارے گھر میں رہ رہے ہیں جس کی وجہ سے راشن وقت سے پہلے ختم ہو رہا ہے۔‘

پارا چنار کے عنایت اللہ نے کہا کہ کئی لوگ اب بھی گھروں کے منہدم ہونے کی وجہ سے ملبے تلے دبے ہوئے ہیں لیکن نہ تو ان کو نکالنے کا کوئی بندوبست ہے اور نہ ہی ہسپتال لےجانےکا۔

تعصب عروج پر
 لوگ ملبے تلے دبے ہوئے ہیں۔ جیسے دولت خان کی مارکیٹ میں انتیس لوگ دب گئے ہیں لیکن تعصب اتنے عروج پر ہے کہ لوگ انسانیت کے ناطے بھی ملبے میں دبے لوگوں کو نہیں نکال رہے
 
عنایت اللہ

ان کا کہنا تھا کہ اگر علاج کی غرض سے گھر سے نکلتے بھی ہیں تو فوج نے دیکھتے ہی گولی مار دینے کا حکم دیا ہوا ہے۔ ’کئی لوگ ملبے تلے دبے ہوئے ہیں۔ جیسے دولت خان کی مارکیٹ میں انتیس لوگ دب گئے ہیں لیکن تعصب اتنے عروج پر ہے کہ لوگ انسانیت کے ناطے بھی ملبے میں دبے لوگوں کو نہیں نکال رہے۔‘

پارا چنار میں حکومت اور قبائلی عمائدین کی کوششوں کے باجود حالات کشیدہ ہیں اور امن و امان کی جلد بحالی کے امکانات کافی کم نظرآ رہے ہیں۔ مقامی لوگوں کا کہنا تھا کہ اگر امن جلد بحال بھی ہوگیا تو اس بات کی کوئی ضمانت نہیں ہے کہ قتل اور فسادات کا کھیل کب اچانک شروع ہوجائے۔

 
 
کراچی کے بس میں شیعہ فرقے کے افراد پر حملہفرقہ واریت کیوں؟
فرقہ وارانہ تنظیموں پر پابندی کارآمد ہے؟
 
 
کوئٹہ میں تشددفرقہ واریت اور تشدد
فرقہ واریت پر قارئین کے خیالات
 
 
فسادات جاری ہیں
کرم ایجنسی فسادات میں درجنوں ہلاک
 
 
ہنگو سے رپورٹ
جیسے یہاں گھمسان کی جنگ ہوئی ہو۔۔۔
 
 
ایف ایمباڑہ میں نیا فساد
ایف ایم ٹیکنالوجی کا فرقہ ورانہ استعمال
 
 
اعظم طارقخون کا سفر
پاکستان میں فرقہ وارانہ تشدد کا ایک اور باب
 
 
اسی بارے میں
کرم ایجنسی میں مزید فوج
09 April, 2007 | پاکستان
تازہ ترین خبریں
 
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے پرِنٹ کریں
 

واپس اوپر
Copyright BBC
نیٹ سائنس کھیل آس پاس انڈیاپاکستان صفحہِ اول
 
منظرنامہ قلم اور کالم آپ کی آواز ویڈیو، تصاویر
 
BBC Languages >> | BBC World Service >> | BBC Weather >> | BBC Sport >> | BBC News >>  
پرائیویسی ہمارے بارے میں ہمیں لکھیئے تکنیکی مدد